1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

ورلڈ ایتھلیٹکس چیمپئن شپ اختتام کو پہنچی

جرمن دارالحکومت برلن میں پندرہ اگست کو شروع ہونے والی ورلڈ ایتھلیٹکس چیمپئن شپ کل اتوار کو اپنے اختتام کو پہنچ گئی۔ اس نو روزہ چیمپئن شپ میں سب سے زیادہ مقابلے تو امریکی ایتھلیٹس نے جیتے۔

default

تاہم دھوم جمیکا کے یُوسین بولٹ اور جنوبی افریقہ کی جواں سالہ کیسٹر سیمینیا کی مچی۔

اتوار کو ورلڈ ایتھلیٹکس چیمپئن شپ کے آخری روز ایتھوپیا کے ایتھلیٹ کینینی سا بیکلے نے ثابت کیا کہ وہ طویل فاصلے کی دوڑ میں ہمیشہ ہی آگے ہیں۔ انہوں نے پانچ ہزار میٹر کی ریس کا ٹائٹل اپنے نام کیا۔ قبل ازیں گزشتہ پیر کو دس ہزار میٹر کی ریس کا ٹائٹل بھی بیکلے نے ہی جیتا تھا۔ پانچ اور دس ہزار میٹر کی ریس کا ورلڈ ریکارڈ بھی بیکلے ہی کے پاس ہے۔

Usain Bolt Berlin Leichtathletik WM 2009

جمیکا کے یُوسین بولٹ

جمیکا کے ایتھلیٹ یُوسین بولٹ چیمپئن شپ کی ابتدا سے ہی بہترین فارم میں تھے۔ انہوں نے مردوں کی ایک سو میٹر کی ریس میں ورلڈ ریکارڈ بنایا اور یہ فاصلہ 9.58 سیکنڈز میں طے کیا۔ بعدازاں جمعرات کو مردوں کی دو سو میٹر ریس کا ٹائٹل جیت کر بولٹ نے اس چیمپئن شپ میں ایک اور ورلڈ ریکارڈ قائم کیا۔ بولٹ نے کامیابیوں کے بعد کہا ہے کہ انہیں خود پر فخر ہے۔

23 سالہ بولٹ پہلے ایتھلیٹ ہیں، جو 100 اور 200 میٹر کے ورلڈ اور اولمپک ٹائٹل بیک وقت اپنے نام کئے ہوئے ہیں۔

دو سو میٹر کی ریس کے لئے امریکی ایتھلیٹ ٹائسن گے کو بھی فیورٹ قرار دیا جا رہا تھا۔ تاہم وہ زخمی ہونے کے باعث جمعرات کے فائنل میں حصہ نہیں لے سکے تھے۔

ورلڈ ایتھلیٹکس چیمپئن شپ کے دوران پانچ روز میں دو عالمی ریکارڈ بنانا یُوسین بولٹ کے لئے اس لئے بھی اہم تھا کہ اس چیمپئن شپ کے دوران ہی گزشہ جمعہ کو انہوں نے اپنی 23 ویں سالگرہ منائی۔

Deutschland Südafrika Leichtathletik WM Caster Semenya

جنوبی افریقہ کی جواں سال کیسٹر سیمینیا

جنوبی افریقہ کی 18 سالہ کیسٹر سیمینیا نے زبردست پرفارمینس کا مظاہرہ کرتے ہوئے خواتین کی آٹھ سو میٹر دوڑ جیتی۔

ورلڈ ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں امریکہ سب سے آگے رہا ہے۔ اس کے کھلاڑیوں نے سونے کے دس تمغوں کے ساتھ مجموعی طور پر بائیس تمغے جیتے ہیں۔ جمیکا کو سات، کینیا اور روس کو چار چار جبکہ میزبان ملک جرمنی سمیت پولینڈ، ایتھوپیا، برطانیہ، جنوبی افریقہ، آسٹریلیا اور بحرین کو سونے کے دو دو تمغے ملے ہیں۔

جرمنی کو سونے کا ایک تمغہ گزشتہ بدھ کو مردوں کی ڈسکس تھرو میں جرمن کھلاڑی رابرٹ ہارٹنگ کی فتح سے حاصل ہوا۔ ڈسکس تھرو ویسے بھی جرمنی میں انتہائی مقبول ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: امجد علی

DW.COM