1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

واپس لوٹنے والے جہادیوں سے خطرات بڑھتے ہوئے

جی سیون کے وزرائے داخلہ کا دو روزہ اجلاس جمعرات کے دن سے اٹلی میں شروع ہو رہا ہے۔ اس ملاقات میں سات امیر ترین صنعتی ممالک کے حکومتی نمائندے کئی عالمی مسائل کے علاوہ یورپ کو لاحق سکیورٹی خدشات بھی زیر بحث لائیں گے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے سفارتی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ دنیا کے سات امیر ترین ممالک یا سات کے گروپ کے وزرائے داخلہ اطالوی جزیرے اسکیا میں ہونے والے اس دو روزہ اجلاس میں داعش کے یورپ میں ممکنہ حملوں پر توجہ مرکوز رکھیں گے۔ شام اور عراق میں اس شدت پسند گروہ کی پسپائی کے نتیجے میں خدشہ ہے کہ اس کے غیر ملکی جنگجو یورپی ممالک کا رخ کرتے ہوئے وہاں دہشت گردانہ کارروائیاں کر سکتے ہیں۔

یورپ میں اسلامک اسٹیٹ کا منڈلاتا  ہوا خطرہ

یورپ میں تارکین وطن کے باعث مزید حملے ممکن، سلوواک وزیر اعظم

یورپی ملک فرانس میں اسلام سے متعلق چند اہم حقائق

ویڈیو دیکھیے 02:45

مہاجرین کا بحران: کیا بدلہ اور کیا نہیں؟

یہ اجلاس ایک ایسے وقت پر منعقد کیا جا رہا ہے، جب ایک دن قبل ہی امریکی حمایت یافتہ شامی فورسز نے داعش کے نام نہاد دارالحکومت الرقہ کو بازیاب کرا لیا تھا۔ قبل ازیں عراق میں بھی ان جہادیوں کو کئی محاذوں پر پسپا کیا جا چکا ہے۔ انتہا پسند گروہ داعش کی اس شکست کے نتیجے میں عالمی خفیہ اداروں نے خبردار کیا ہے کہ ان ممالک میں فعال جنگجو اب وہاں سے فرار ہو کر دیگر ممالک کا رخ کر رہے ہیں۔

کئی ماہرین پہلے بھی خبردار کر چکے تھے کہ گزشتہ کچھ ماہ سے شام اور عراق میں شدت پسند تنظیم داعش کے کئی جنگجو وہاں سے فرار ہو چکے ہیں۔ ان کے بارے میں خیال کیا جا رہا ہے کہ وہ ترکی جا رہے ہیں، جہاں سے وہ یورپ پہنچنے کی کوشش کر سکتے ہیں۔ ایسے خدشات بھی ہیں کہ یہ جہادی اپنی نام نہاد خلافت کی تباہی کا بدلہ لینے کی خاطر یورپی ممالک میں حملے کر سکتے ہیں۔

یہ امر اہم ہے کہ سن دو ہزار چودہ اور دو ہزار سولہ کے درمیان مغربی ممالک سے تعلق رکھنے والے ہزاروں شہری شام اور عراق گئے تھے، جہاں انہوں نے داعش کے ساتھ مل کر پرتشدد کارروائیاں کی تھیں، جن میں درجنوں ہلاکتیں بھی ہوئی تھیں۔ اب یہی یورپی جہادی واپس اپنے اپنے ممالک پہنچنے کی کوشش میں ہیں۔

محتاط اندازوں کے مطابق صرف فرانس سے تعلق رکھنے والے ایک ہزار افراد نے داعش میں شمولیت اختیار کی تھی، جن کی اب فرانس واپسی ایک بڑا خطرہ قرار دی جا رہی ہے۔ اسی تناظر میں فرانس میں کئی حکام نے حالیہ ہفتے کے دوران کہا تھا کہ بہتر ہو اگر یہ جہادی شام اور عراق میں ہی لڑتے لڑتے مر جائیں۔

اطالوی وزیر داخلہ مارکو منیتی نے بھی خبردار کیا ہے کہ شام اور عراق میں داعش کی شکست کے نتیجے میں غیر ملکی جنگجوؤں کا ایک بڑا گروہ خطرے کا باعث بن سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عراق اور شام میں قریب سو ممالک سے تعلق رکھنے والے پچیس تا تیس ہزار غیر ملکی جنگجو تھے، جن میں سے کچھ ہلاک بھی ہوئے لیکن یہ ممکن ہے کہ دیگر واپس اپنے اپنے ممالک جانے کی کوشش کریں گے۔

اس صورتحال میں اسکیا میں ہونے والے جی سیون کے اس وزارتی اجلاس میں ایک متفقہ حکمت عملی ترتیب دینے کی کوشش کی جائے گی۔ سفارتی ذرائع کے مطابق عالمی رہنما آن لائن دہشت گردی جیسے اہم اور خطرناک معاملے پر بھی مشترکہ موقف اختیار کرنے کی کوشش کریں گے۔ بتایا گیا ہے کہ اس لیے سماجی رابطوں کی اہم ویب سائٹس بشمول گوگل، مائیکروسافٹ، فیس بک اور ٹوئٹر کے نمائندے بھی اس اجلاس میں شریک ہوں گے۔ جی سیون کے رکن ممالک میں برطانیہ، کینیڈا، فرانس، جرمنی، اٹلی، جاپان اور امریکا شامل ہیں۔

DW.COM

Audios and videos on the topic