1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نیو یارک شہر تو تارکین وطن کی جائے پناہ ہے، میئر دے بلاسیو

امریکی شہر نیو یارک کے میئر بِل دے بلاسیو غیر قانونی تارکین وطن کو ملک بدری سے بچانے کے خواہش مند ہیں۔ دے بلاسیو کے مطابق انہوں نے اپنے اس منصوبے کے بارے میں نو منتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو آگاہ کر دیا ہے۔

نیو یارک کے میئر بِل دے بلاسیو نے کہا کہ انہوں نے ذاتی طور پر نو منتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ پر یہ واضح کر دیا ہے کہ نیو یارک اور دیگر بہت سے امریکی شہر اپنی بھرپور کوششیں کریں گے کہ ان شہروں کے رہائشیوں کو تحفط فراہم کیا جائے اور کسی بھی خاندان کو ٹوٹنے نہ دیا جائے۔

اس ڈیموکریٹ سیاستدان نے صحافیوں کو یہ بات ریپبلکن سیاستدان ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ اپنی ایک ملاقات کے بعد بتائی۔ انہوں نے مزید کہا کہ ٹرمپ کے غیر قانونی تارکین کو ملک بدر کرنے کے ارادوں کی وجہ سے اس شہر کے بہت سے باسی اُن کے صدر منتخب ہو جانے کے بعد سے خوف زدہ ہیں۔

دے بلاسیو نے لاس اینجلس، سان فرانسسکو، شکاگو، بوسٹن، فلاڈیلفیا اور واشنگٹن کے میئروں کے ساتھ مل کر  اپنے شہر کو تارکین وطن کی ’جائے پناہ‘ قرار دیا۔ ساتھ ہی انہوں نے بغیر قانونی دستاویزات کے شہر میں رہائش پذیر غیر ملکیوں کی ملک بدری روکنے کے اپنے عزم کو بھی دہرایا۔

انہوں نے ایسے افراد کی قانونی حیثیت سے قطع نظر ان کی بنیادی سہولیات اور عوامی خدمات تک رسائی میں توسیع بھی کر دی ہے۔ اس حوالے سے بِل دے بلاسیو نے کہا کہ نیو یارک بنیادی طور پر تارکین وطن کا شہر ہے، جسے نسل در نسل تارکین وطن ہی نے آباد کیا۔

ٹرمپ نے اعلان کیا تھا کہ بیس جنوری کو صدارتی عہدہ سنبھالتے ہی وہ تین ملین تک غیر قانونی تارکین وطن کو ملک بدر کر دیں گے۔ اس سے قبل وہ اپنی انتخابی مہم کے دوران امریکا میں رہائش پذیر تقریباً گیارہ ملین غیر قانونی افراد کو امریکا سے نکالنے کی بات کرتے رہے تھے۔ تاہم اب ان کے موقف میں معمولی سی تبدیلی آئی ہے اور گزشتہ اتوار کے روز انہوں نے اپنے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ ان کی توجہ اُن غیر قانونی تارکین وطن کو امریکا سے نکالنے پر مرکوز رہے گی، جو جرائم، مجرمانہ سرگرمیوں، منشیات کے کاروبار یا اسی طرح کی دیگر سرگرمیوں میں ملوث ہوں گے۔

بِل دے بلاسیو نے انتخابات سے قبل ٹرمپ کو ایک خطرناک اور ایک نااہل صدارتی امیدوار قرار دیا تھا جبکہ ٹرمپ بھی دے بلاسیو کو امریکا کا سب سے برا میئر قرار دیتے تھے۔ تاہم بدھ کی شب ہونے والی ملاقات کے حوالے سے دے بلاسیو نے کہا کہ ان کی اور ٹرمپ کی بات چیت انتہائی مثبت انداز میں ہوئی اور دونوں اس موقع پر ایک دوسرے کے ساتھ عزت و احترام سے پیش آئے۔