1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

نیویارک کے بعض مذہبی مراکز کو حکومتی تحویل میں لئے جانے کی اپیل

امریکہ کے مرکزی استغاثہ نے نیویارک میں چار مساجد اور ایک چھتیس منزلہ عمارت کو سرکاری تحویل میں لئے جانے کی اپیل کی ہے۔ مین ہٹن میں واقع یہ بلند عمارت علوی فاؤنڈیشن اور عصا کارپوریشن کی مشترکہ پراپرٹی بتائی گئی ہے۔

default

اس فاؤنڈیشن کے بارے میں کہا گیا ہے کہ وہ ایرانی حکومت کے ساتھ براہ راست رابطے میں ہے۔ استغاثہ پریت بھارارا کے دفتر سے جاری کئے گئے اعلامئے میں کہا گیا ہے کہ علوی فاؤنڈیشن تہران حکومت کو ایران کے ملّی بینک کے ذریعے رقوم منتقل کرنے میں ملوث ہے۔

استغاثہ کے مطابق علوی فاؤنڈیشن عملی طور پر امریکہ میں ایرانی حکومت کے مفادات کی نگرانی کر رہی ہے۔ اپیل میں کہا گیا ہے کہ یہ فاؤنڈیشن ففتھ ایونیو پر واقع عمارت کے کرایے سے حاصل ہونے والی رقم اور دیگر فنڈز عصا کارپوریشن کے ذریعے ایران کے قومیائے گئے ملّی بینک کو روانہ کرتی ہے۔

عصا کارپوریشن اور علوی فاؤنڈیشن اِس عمارت کے مشترکہ مالکان ہیں۔ عصا کارپوریشن ایک لمیٹڈ کمپنی ہے، جس کے بارے میں استغاثہ نے یقین ظاہر کیا ہے کہ ملّی بینک نے اِس کو اپنے مقاصد کے لئے قائم کر رکھا ہے۔ امریکہ میں اس بینک کے اثاثے 2007ء سے منجمد کئے جا چکے ہیں۔

Ali Khamenei zu Verhandlungen mit den USA

ایران کے روحانی پیشوا آیت اللہ خامنہ ائی

پریت بھارارا نے اِس عمارت کو حکومتی تحویل میں لئے جانے کی درخواست نیویارک کی وفاقی عدالت میں جمع کرائی ہے۔ اِس درخواست فاؤنڈیشن کے تمام اکاؤنٹ منجمد کرنے کے لئے بھی کہا گیا ہے۔ اِسی فاؤنڈیشن کے چار مختلف ریاستوں میں قائم مذہبی مراکز کو بھی حکومتی کنٹرول میں لینے کی استدعا کی گئی ہے۔ ان ریاستوں میں ٹیکساس، ورجینیا، میری لینڈ اور کیلیفورنیا شامل ہیں۔

علوی فاؤنڈیشن کے ایرانی بینک کے ساتھ رابطوں کا احوال بھی عدالتی اپیل میں شامل ہے۔ یہ فاؤنڈیشن درحقیقت سابق پہلوی فاؤنڈیشن کی نئی شکل ہے۔ ایران میں 1979ء کے انقلاب کے بعد اس کا نام تبدیل کر دیا گیا۔ اس فاؤنڈیشن کا کہنا ہے کہ دراصل فلاحی سرگرمیاں ہی اس کے ایجنڈے پر ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اِس کے انتظامی اُمور کی نگرانی کرنے والے ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ائی کو براہ راست جواب دہ ہیں۔

استغاثہ کے بیان میں بتایا گیا ہے کہ دو دہائیوں سے یہ فاؤنڈیشن ایرانی حکومت کے اہلکاروں کی نگرانی میں کام کرتی آ رہی ہے۔ اِس میں اقوام متحدہ میں ایران کے مستقل سفیر بھی شامل ہیں۔ استغاثہ کے مطابق یہ امریکی قوانین کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

دوسری جانب امریکی صدر باراک اوباما نے ایران پر عائد پابندیوں کی مدت کو مزید بڑھا دیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ ایران کے ساتھ امریکی تعلقات ابھی ٹھیک نہیں، اس لئے پابندیاں ہٹائی نہیں جا سکتیں۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عابد حسین

DW.COM