1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نیویارک سمندری طوفان آئرین کے خطرے میں

نیویارک سٹی پر سمندری طوفان آئرین کا خطرہ منڈلا رہا ہے۔ امریکی صدر باراک اوباما نے کہا ہے کہ یہ طوفان بہت خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ اسی تناظر میں وہ اپنی چھٹیاں ادھوری چھوڑتے ہوئے واپس لوٹ گئے ہیں۔

default

امریکی صدر باراک اوباما کی یہ چھٹیاں ہفتہ کو ختم ہونے والی تھیں، تاہم وہ جمعہ کو ہی واشنگٹن پہنچ گئے۔ موسمیاتی پیش گوئی کے مطابق درجہ دوم کا یہ سمندری طوفان ہفتہ کو شمالی کیرولین پہنچے گا اور براہ راست نیویارک سٹی سے ٹکرا سکتا ہے۔

نیویارک سٹی کی انتظامیہ نے اس طوفان کے خطرے کے پیش نظر شہر کے نشیبی علاقوں سے ڈھائی لاکھ سے زائد افراد کے انخلاء کے احکامات جاری کیے ہیں۔ طوفان سے قبل شہر بھر میں ماس ٹرانزٹ نظام بھی بند کیا جا رہا ہے جبکہ ہفتے سے شہر کے مرکزی ہوائی اڈوں پر پروازوں کی آمد بھی معطل کی جا رہی ہے۔

Hurrikan Irene Nassau Bahamas

یہ طوفان پہلے ہی بہاماز میں تباہی مچا چکا ہے

حکام مشرقی ساحل پر ہنگامی صورت حال کا اعلان کر چکے ہیں۔ انہوں نے بجلی کی بندش کے حوالے سے بھی خبردار کیا ہے۔ اس وقت طوفانی ہواؤں کی رفتار ایک سو ساٹھ کلو میٹر ہے اور جس وقت یہ امریکی ساحلی علاقوں سے ٹکرائے گا، اس وقت چھ سے گیارہ فٹ بلند لہریں پیدا ہو سکتی ہے۔

تاہم یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ طوفان کی شدت میں کچھ کمی ہوئی ہے۔ اس موسم گرما کا یہ پہلا سمندری طوفان ہے، جس نے امریکہ میں خوف و ہراس پیدا کر رکھا ہے۔

اس طوفان کے نتیجے میں بھاری معاشی نقصان کا اندازہ بھی لگایا جا رہا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ صرف نیو یارک کو سمندری طوفان کے ٹکرانے سے بارہ ارب ڈالر تک کا نقصان ہو سکتا ہے۔

جمعرات کو اس طوفان نے بہاماز میں تباہی مچائی تھی، وہاں ہواؤں کی رفتار ایک سو اسیّ کلومیٹر فی گھنٹہ ریکارڈ کی گئی تھی۔

رپورٹ:  ندیم گل / خبر رساں ادارے

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس