1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

نیا سال: مہاجر دوست جرمن حلقے مہاجرین کی حمایت کے لیے پرعزم

نئے سال کی آمد پر بھی جرمنی میں مہاجرین کا موضوع زیر بحث ہے۔ جرمنی کے کثیر الاشاعت روزنامہ ’بلڈ‘ کی رپورٹوں کے مطابق تارکین وطن کی پناہ کی درخواستوں کی انفرادی جانچ پڑتال کا کام یکم جنوری سے دوبارہ شروع ہو جائے گا۔

جرمنی کے وفاقی ادارہ برائے تارکین وطن اور مہاجرت (بی اے ایم ایف) کا کہنا ہے کہ اس دوران شام، عراق اور اریٹریا جیسے شورش زدہ ممالک سے آنے والے مہاجرین کی درخواستوں پر فیصلے ترجیحی بنیادوں پر کیے جائیں گے جب کہ دوسرے ممالک سے آنے والے پناہ گزینوں کی درخواستوں کا انفرادی طور پر جائزہ لینے اور فیصلہ کرنے میں زیادہ وقت لگ سکتا ہے۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی اتحادی جماعت، کرسچن سوشل یونین کی جانب سے گزشتہ روز تارکین وطن کی جرمنی آمد کو ’انتہائی کم‘ کرنے، ملک بدریوں میں اضافہ کرنے اور بغیر شناخت کسی کو جرمنی آنے کی اجازت نہ دینے جیسے سخت مطالبات منظر عام پر آئے تھے۔

قدامت پرست اور مہاجرین مخالف جماعت کے ان مطالبات کو جرمنی کے ان تمام سیاسی و سماجی حلقوں نے تنقید کا نشانہ بنایا جو تارکین وطن کی مدد اور حمایت کرتے ہیں۔

جرمنی میں پروٹسٹنٹ کلیسا کی قومی کونسل کے سربراہ ہائنرش بیڈفورڈ شٹروہم کا کہنا ہے کہ ہمیں تارکین وطن کے دل جیتنے کی کوشش کرنا چاہیے۔ شٹروہم کا یہ بھی کہنا تھا کہ جرمنی میں پہلے سے آباد مسلمان شہری مہاجرین کے انضمام میں بہتر کردار ادا کر سکتے ہیں۔

بائیں بازو کی جرمن سیاسی جماعت (لنِکس پارٹی) نے سی ایس یو کی جانب سے شناختی دستاویزات کے بغیر پناہ گزینوں کو جرمنی نہ آنے دینے کے مطالبے کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

سوشل ڈیموکریٹک پارٹی ایس پی ڈی سے تعلق رکھنے والی جرمنی کی وفاقی کمشنر برائے مہاجرت، ایڈان اُوزوس کا کہنا تھا کہ ان مطالبات پر عمل درآمد کی صورت میں مہاجرین کے بحران پر یورپی یونین کی جانب سے مشترکہ پالیسی اختیار کرنے کا خواب چکنا چوُر ہو جائے گا۔

شہر ٹوبِنگن کے گرین پارٹی سے تعلق رکھنے والے میئر نے روزنامہ ’بلڈ‘ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا کہ موجودہ صورت حال کا تقاضا ہے کہ مہاجرین کے بحران سے مصلحت کے ساتھ نمٹا جائے۔

Galerie - Flüchtlinge in Dänemark

مہاجرین کی مدد میں مصروف جرمن رضاکار نئے برس کے دوران بھی تارکین وطن کی حمایت جاری رکھنے کے لیے پر عزم ہیں

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے اپنے نئے سال کے پیغام میں کہا ہے کہ مہاجرین کی آمد ملکی اقتصادیات میں بہتری کے علاوہ معاشرتی سطح پر بھی فائدہ مند ہو گی۔ وہ پُر امید ہیں کہ جرمنی اس بحران سے بخوبی نمٹ سکتا ہے۔ جرمنی کے عوامی نشریاتی ادارے نے پہلی مرتبہ ان کی تقریر کو عربی ’سب ٹائٹلز‘ کے ساتھ نشر کیا۔

جرمن ریڈ کراس کے ساتھ ساتھ رضاکاروں کے محکمے کے سربراہ اور سماجی بہبود کے دیگر اداروں کی جانب سے بھی نئے سال کے موقع پر تارکین وطن کے لیے خیر سگالی کے پیغامات دیے گئے۔

DW.COM