1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نیا بجٹ غریبوں کے لیے ہے، بھارتی وزیر خزانہ

بھارتی وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے نئے مالی سال کے بجٹ کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ غریبوں کا بجٹ ہو گا۔ سال دو ہزار سترہ اور اٹھارہ کے مالی سال کے بجٹ میں دفاعی اخراجات میں دس فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے بھارتی وزیر خزانہ ارون جیٹلی کے حوالے سے بتایا ہے کہ عالمی معیشت میں بھارت ایک اہم ملک ہے اور اس کی اقتصادی پالیسیاں انتہائی اہمیت کی حامل ہیں۔ بدھ کے دن پارلیمان میں نئے مالی سال کے بجٹ کا اعلان کرتے ہوئے جیٹلی نے کہا کہ بڑے نوٹوں کے ختم کرنے کی وجہ سے ملکی معیشت پر جو منفی اثرات رونما ہوئے ہیں، ان پر جلد ہی قابو پا لیا جائے گا۔

بھارتی سپریم کورٹ نے قومی بجٹ میں تاخیر کی اپیل رد کر دی

بھارت: عام بجٹ میں کسانوں اور دیہی علاقوں پر خاص نظر عنایت

بھارتی کسان دکھ درد کے موسم کی لپیٹ میں

بطور وزیر خزانہ اپنے چوتھے سالانہ بجٹ کا اعلان کرتے ہوئے جیٹلی نے کہا کہ اس مرتبہ توجہ دیہی علاقوں پر مرکوز کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دیہی علاقوں میں ترقیاتی منصوبے شروع کیے جائیں گے اور غربت کے خاتمے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے۔ جیٹلی نے کہا کہ اس مرتبہ بجٹ کی تیاری میں غربت کے خاتمے کو زیادہ اہمیت دی گئی ہے۔ جیٹلی کے مطابق نئے بجٹ میں اس بات کا خیال بھی رکھا گیا ہے کہ بھارت میں اقتصادی نمو کے حوالے سے محتاط مالیاتی پالیسی اختیار کی جائے۔

نئے بجٹ میں کسانوں کے لیے حکومتی فنڈنگ پر بھی توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ جیٹلی کے مطابق دیہی علاقوں کے لیے حکومتی اخراجات میں اضافہ کیا جا رہا ہے اور انکم ٹیکس کی بنیادی شرح کو نصف کیا جا رہا ہے۔

ارون جیٹلی کے بقول بھارت کوعالمی معیشت میں ایک انجن کی حیثیت سے دیکھا جاتا ہے لیکن امریکا میں شرح سود میں ممکنہ اضافہ، عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں کا زیادہ ہونا اور دیگر ممالک کی پالیسیوں سے بھارتی معیشت متاثر ہو سکتی ہے۔

Indien Neu Delhi Narendra Modi , Ministerpräsident (picture-alliance/Xinhua)

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے اس بجٹ کو ملکی ترقی کا پیش خیمہ قرار دیا ہے

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے گزشتہ برس نومبر میں ایک ہزار اور پانچ سو روپے کے نوٹ اچانک ختم کرنے کا اعلان کر دیا تھا، جس کا مقصد بدعنوانی پر قابو پانا تھا۔ اس پیشرفت سے بھارت میں چھیاسی فیصد کیش اچانک ختم ہو گیا تھا۔ اس وجہ سے بالخصوص زراعت اور ایسے شعبہ جات میں کیش کی کمی ہو گئی تھی، جہاں زیادہ تر نقد رقوم کے ذریعے ہی لین دین ہوتا ہے۔

ناقدین کے مطابق مودی کی اس پالیسی سے ملکی معیشت کی ترقی پر بھی اثر پڑا ہے۔ اس تناظر میں جیٹلی کا کہنا تھا کہ بڑے نوٹوں کو ختم کرنے سے کیش کے بحران پر جلد ہی قابو پا لیا جائے گا۔ اندازہ لگایا گیا ہے کہ موجودہ مالی سال میں مارچ تک شرح نمو 6.5 فیصد تک رہ سکتی ہے جبکہ آئندہ مالی سال کے دوران اس میں اضافہ ہو جائے گا اور یہ 6.75 اور 7.5 فیصد کے درمیان تک پہنچ جائے گی۔ بھارت میں مالی سال یکم اپریل سے شروع ہوتا ہے۔

DW.COM