1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

نہ دکھائی دینے والے زخم کس طرح بھرے جاتے ہیں؟

بم دھماکے، فائرنگ، لاشیں، خوفزدہ مناظر کس طرح انسان کی نفسیات پر اثر انداز ہوتے ہیں اور خاص طور پر ان افراد کی، جو ایسے واقعات سے براہ راست متاثر ہوں۔ دہشت گردی سے متاثرہ افراد کس طرح کے نفسیاتی مسائل کا شکار ہوتے ہیں؟

اندریاس مؤلر سائرن گزشتہ بائیس برسوں سے کلیسا کی جانب سے ہنگامی صورتحال کے شکار افراد کی نفسیاتی اور روحانی رہنمائی کرتے ہیں۔ گزشتہ برس نومبر میں پیرس میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کے بعد بھی انہوں نے متاثرین کو ہر طرح کا تعاون مہیا کیا۔ اس تناظر میں انہوں نے ڈی ڈبلیو سے باتیں کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی سے متاثرہ افراد کو سب سے پہلے اُسے اُس کے ہونے یا موجودگی کا احساس دلانا ہونا ہوتا ہے، ’’ایسے کسی واقعے میں بچ جانے والے فرد پر یہ واضح کرنا ضروری ہوتا ہے کہ جس خطرے کا وہ شکار ہوا تھا وہ اب ٹل چکا ہے اور وہ اب محفوظ ہے۔ پیرس حملوں کے بعد میں نے ایک پارک میں متاثرہ افراد سے ملاقات کی کیونکہ یہ افراد کسی کیفے میں مجھ سے ملنے سے کترا رہے تھے۔‘‘ پیرس میں دہشت گردوں نے ایک کیفے کو بھی نشانہ بنایا تھا۔

ڈی ڈبلیو نے ان سے پوچھا کہ کسی واقعے کے فوری بعد کے دنوں میں وہ کس طرح سے کام کرتے ہیں؟ وہ کہتے ہیں کہ متاثرہ افراد کو یہ سمجھانا ہوتا ہے کہ رونما ہونے والا واقعہ اب ماضی کا حصہ بن چکا ہے۔ ’’ اس کے لیے ہم ایسے افراد کو تحفظ کا یقین دلاتے ہیں۔ ہم انہیں بات چیت کا موقع فراہم کرتے ہیں اور پولیس کی طرح ان سے پوچھ گچھ نہیں کرتے۔ بھروسہ قائم ہونے کے بعد متاثرہ افراد ہمیں اپنی آپ بیتی سناتے ہیں اور اس دوران ایسے واقعات بھی سامنے آتے ہیں، جو شاید وہ اپنے اہل خانہ کو بھی بتانا نہ پسند کریں۔

مؤلر سائرن کے مطابق دہشت گردانہ حملوں سے متاثرہ افراد کے ذہنی دباؤ کو کم کرنا واقعی ایک مشکل مرحلہ ہوتا ہے کیونکہ ذرائع ابلاغ میں بار بار اس واقعے کا تذکرہ ہوتا ہے۔ ’’بچ جانے والے زیادہ تر افراد کو اس بات میں دلچسپی ہوتی ہے کہ یہ واقعہ کیسے اور کب رونما ہوا تھا۔‘‘ سائرن کے بقول وہ متاثرہ افراد کو ایک ایسی کشتی کی تصویر دکھاتے ہیں، جسے دو چپوؤں سے چلایا جا رہا ہے۔ ’’اس کا مطلب یہ ہوا کہ اچھا ہے کہ رونما ہونے والے واقعے کو یاد رکھتے ہوئے اس پر کام کیا جائے جبکہ دوسرے چپو کا مطلب ہے کہ اس واقعے کو بھلا کر زندگی کو اچھے انداز سے آگے بڑھانے کے بارے میں سوچا جائے۔‘‘ اندریاس مؤلر سائرن کہتے ہیں کہ دونوں چپوؤں کو ایک ساتھ آگے بڑھانے سے ہی کشتی بھی سیدھے انداز میں آگے بڑھے گی اور نتیجہ حاصل ہو گا۔