1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نيٹو کے ٹرکوں پر حملہ، ڈرون حملوں کا انتقام: طالبان

پاکستان کی سرزمين پر امريکی ڈرون حملوں ميں پاکستانی فوجيوں اور شہريوں کی ہلاکت پر احتجاج کرتے ہوئے حکومت نےطورخم کا راستہ نيٹو کے لئے بند کررکھا ہے۔ متبادل راستے پر نيٹو کے ٹرکوں پر حملہ ہوا ہے۔

default

فائر بريگيڈ کی ٹينکروں کو لگی آگ بجھانے کی کوشش۔

پاکستان کے شمال مغربی شہر کوئٹہ کی پوليس کے مطابق آج صبح مسلح افراد نے کوئٹہ کے قريب نيٹو کے سپلائی کے ٹرکوں پر حملہ کر کے اُنہيں آگ لگا دی۔ طالبان نے کہا ہے کہ يہ اُن کا حملہ تھا اور انہوں نے صوبے بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے اختر آباد کے علاقے ميں نيٹو کے ٹرکوں کے پارک کئے جانے کے ساتھ ہی حملے کے لئے پوزيشن سنبھال لی تھی۔

طورخم کا راستہ بند ہونے کی وجہ سے نيٹو نے سپلائی کے لئے يہ متبادل چھوٹا راستہ اختيار کيا تھا جہاں اُس کے ٹرکوں پر آج صبح حملہ کيا گيا۔ طالبان کے ترجمان اعظم طارق نے ايک نامعلوم مقام سے ٹيليفون پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ يہ حملہ امريکہ کے، بغیر پائلٹس والے ڈرون طياروں کے حملوں کے جواب ميں کيا گيا ہے جن ميں بے گناہ افراد ہلاک ہورہے ہيں۔

Pakistan Rebellen fackeln schon wieder Nato-Laster 04.10.2010

ايک پاکستانی ڈرائيور نيٹو کے جلے ہوئے آئل ٹينکر سے اپنے کام کی چيزيں نکال رہا ہے

کوئٹہ پوليس کے مطابق تازہ ترین حملے ميں ايک شخص ہلاک بھی ہوا ہے۔ پوليس افسر شاہنواز خان نے جرمن خبر رساں ايجنسی کو ٹيليفون پر بتايا کہ آج صبح کئی مسلح افراد دو يا تين گاڑيوں ميں آئے اور اُنہوں نے ايک پرائيويٹ پارکنگ ايريا ميں کھڑے نيٹو کے ٹرکوں پر گولياں چلائيں اور اُنہيں آگ لگادی۔

اس کے بعد وہ فرار ہونے ميں کامياب ہو گئے۔ ڈپٹی انسپکٹر جنرل آپريشنز حامد شکيل نے بتايا:" آج صبح دو گاڑياں نمو دار ہوئيں جن پر مسلح افراد سوار تھے۔اُنہوں نے پہلے ہوا ميں فائرنگ کی جس سے لوگ جان بچاتے ہوئے بھاگ گئے۔ اس کے بعد اُنہوں نے کوئی چيز ٹرکوں کی طرف پھينکی جس سے اُن ميں آگ لگ گئی۔"

پاکستان کی داخلی خفيہ سروس کے سابق ڈائريکٹر مسعود خٹک نے کہا: " وقت آگيا ہے کہ امريکی يہ سمجھيں کہ وہ يہاں جو کچھ کررہے ہيں وہ پاکستانی قوم کی براہ راست توہين ہے۔"

Nato-Angriff Pakistan

پاکستانی سرحدی محافظ افغان سرحد کے قريب نيٹو کے سپلائی ٹرک کے قريب

امريکی، حسب سابق اسی موقف پر قائم ہيں کہ يہ دہشت گردی کا مقابلہ ہے۔ اس ہفتے امريکی ڈرون حملے ميں ہلاک ہونے والوں ميں پاکستان اور افغانستان کے سرحدی علاقے ميں موجود آٹھ جرمن شہری بھی ہيں جن پر انتہاپسند ہونے اور جرمنی ميں دہشت گردانہ حملوں کی منصوبہ بندی کا شبہ تھا۔

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس