1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نوبل انعام برائے امن، اوباما بازی لے گئے

سال رواں کا نوبل انعام برائے امن جمعہ کے روز امریکی صدر باراک اوباما کو امن اور انصاف کے لئے ان کی’’ غیر معمولی‘‘ سفارتی کوششوں کے اعتراف میں دیا گیا۔

default

اوباما نوبیل انعام کی خبر سننے کے بعد احساسات کا اظہار کرتے ہوئے

ناروے کے دارلحکومت اوسلو میں نوبل فاؤنڈیشن کی پانچ خفیہ رکنی کمیٹی نے اس سال کا نوبل انعام برائے امن باراک اوباما کو دیا۔ ناروے میں نوبل کمیٹی کے سربراہ تھوربییون یاگ لینڈ نے صدر اوباما کی بین الاقوامی سطح پر سفارت کاری کے لئے غیر معمولی کاوشوں سراہا اور کہا کہ کو اوباما کی یہی کوششیں دنیا میں امن وسلامتی کا ایک نیا بات کھولیں گی۔

Obama in Kairo Flash-Galerie

صدر اوباما نے صدارت کا عہدہ سنبھالنے بعد ترکی کا دورہ کیا جہاں انہوں نے مسلم دنیا سے اچھے تعلقات بنانے اور مشرق اور مغرب کے درمیان فاصلے کم کرنے کا عندیہ دیا

صدر اوباما کو امن انعام ملنے پر دنیا بھر میں خوشگوار حیرانگی کا اطہار کیا جارہا ہے، کیونکہ ابھی تو اوباما کو امریکی صدارت سنبھالے صرف نو مہینے ہی ہوئے ہیں اور ان کی کوششوں کا ثمر ابھی سامنے آنے کے امکانات فی الوقت اتنے روشن بھی نہیں۔

سال رواں کے نوبل انعام برائے امن کے لئے دنیا بھر سے 205 امیداروں کے نام تجویز کئے گئے تھے، جو کہ ایک ریکارڈ ہے۔ نوبل انعام کے اعلان سے قبل ہی مغربی ممالک میں اس حوالے میں چہ مگوئیاں شروع ہوجاتی ہیں کہ اس مرتبہ یہ انعام کس کے حصہ میں آئے گا۔

Bildgalerie USA Wahlen Obama Iran 2

برطانوی بک میکر ’’لاڈ بروکس‘‘ اور آئرش ’’پیڈی پاور‘‘ نے چین کی کمیونسٹ حکومت کے مخالف اور وہاں انسانی حقوق کے لئے سرگرم کارکن ہو جیا کو اس انعام کے لئے فیورٹ قرار دیا تھا۔ گو کہ اب یہ چہ مگوئیاں دم توڑ گئی ہیں، کیونکہ یہ انعام اب صدر اوباما کو مل گیا ہے۔ نوبل امن انعام کے ضمن میں 1.4 ملین ڈالر کی رقم اس انعام کے جیتنے والے کو دی جاتی ہے۔ صدر اوباما کو یہ انعامی رقم اور نوبل ڈپلوما دس دسمبر کو دیا جائے گا۔

نوبل انعام برائے امن کے فیورٹ امیدواروں کی فہرست میں کولمبیا کے سینیٹر پیڈاد کورڈوبا، اردن کے غازی بن محمد اور افغانستان میں عورتوں کے حقوق کے جدوجہد میں سرگرم نامور کارکن سیمی ثمر کے نام بھی شامل تھے۔ اس کے علاوہ ناروے کے قومی ٹی وی چینل کے مطابق زمبابوے کے مورگن زوان گیرائے بھی اس سال کے نوبل انعام کے لئے پسندیدہ امیدوار تھے۔

رپورٹ: انعام حسن

ادارت: کشور مصطفٰی