1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نماز جنازہ پر خود کُش حملہ، کم از کم 25 ہلاک

آج پاکستانی صوبے خیبر پختونخوا میں حکومت کے حامی ایک قبائلی بزرگ بخت خان کی نماز جنازہ کے دوران ہونے والے ایک خود کُش دھماکے کے نتیجے میں کم از کم 25 افراد ہلاک اور 60 زخمی ہو گئے۔

ایک حملے کے زخمی، فائل فوٹو

ایک حملے کے زخمی، فائل فوٹو

مقامی میڈیا میں ضلع لوئر دیر میں ثمر باغ کے مقام پر پیش آنے والے اِس واقعے میں ہلاکتوں کی تعداد 30 سے بھی زیادہ بتائی جا رہی ہے۔ ضلعی منتظم سلیم مروت نے بتایا ہے کہ اِس حملے کا ہدف اُس مقامی امن لشکر کے ارکان تھے، جسے اِس علاقے میں طالبان کے خلاف لڑنے کے لیے تشکیل دیا گیا تھا۔ جنازے میں مجموعی طور پر کوئی دو سو افراد شریک تھے، جن میں اس امن لشکر کے ارکان بھی کثیر تعداد میں شامل تھے۔

ایک ترجمان نے بتایا:’’حملہ آور پیدل آیا تھا اور اُس نے لوگوں کے بیچوں بیچ خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔‘‘ سلیم مروت کے مطابق حملہ آور ایک قریبی کھیت میں چھپا ہوا تھا اور پھر اللہ اکبر کا نعرہ لگاتے ہوئے قبرستان کی طرف بھاگ کر آیا تھا۔ ابھی کسی نے بھی اِس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی تاہم خیال کیا جاتا ہے کہ اس کے پیچھے پاکستانی طالبان کا ہاتھ ہے۔

ایک عینی شاہد گل رحمان نے بتایا کہ اِس حملے میں خود بھی مارے جانے والے حملہ آور کی لمبی داڑھی تھی۔ رحمان نے بتایا کہ دھماکے کے نتیجے میں وہ گر گیا تھا لیکن پھر بھی اُس نے زخمیوں کو ہسپتال تک منتقل کرنے میں مدد دی۔

دھماکے کی جگہ پر ہر طرف خون سے لتھڑے ہوئے جوتے نظر آ رہے تھے جبکہ پولیس اہلکار بم کے ٹکڑے اکٹھے کر رہے تھے۔

منگل کو طالبان عسکریت پسندوں نے پشاور اسکول سے واپس آنے والے بچوں کی وَین پر حملہ کر کے چار بچوں کو ہلاک کر دیا تھا۔ اس حملے کا مقصد بھی ایک مقامی ملیشیا کو طالبان کے خلاف لڑنے سے روکنا تھا۔

رپورٹ: امجد علی / خبر رساں ادارے

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس