1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

ناکامی کی وجہ ’’اتحاد کی کمی‘‘ہے: آفریدی

ٹوئنٹی ٹوئنٹی فارمیٹ میں پاکستان کے کپتان شاہد خان آفریدی کے مطابق آسٹریلیا کے خلاف مسلسل ناکامیوں کی سب سے بڑی وجہ ’ٹیم میں اتحاد کی کمی ہے۔‘ آفریدی نے کہا کہ کھلاڑی قوم اور ٹیم کی بجائے اپنی ذات کے لئے کھیلتے ہیں۔

default

آسٹریلیا کے ہاتھوں تین میچوں پر مشتمل حالیہ ٹیسٹ سیریز میں شکست کے بعد پاکستانی ٹیم کو ون ڈے سیریز میں بھی ہار کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ آسٹریلیا نے پانچ میچوں پر مبنی ون ڈے سیریز کے پہلے تین میچ آسانی سے جیتے ہیں۔

ایڈیلیڈ ون ڈے ہارنے کے بعد پاکستان کے سٹار آل راوٴنڈر بوم بوم آفریدی نے کہا: ’’ٹیم کے کھلاڑی ایک یونٹ کی طرح نہیں کھیل رہے ہیں۔‘‘ آفریدی نے جیو ٹیلی وژن کے ایک پروگرام میں کہا: ’’موجودہ کپتان محمد یوسف ٹیم کو اکھٹا کرنے میں بری طرح ناکام ہوگئے ہیں۔‘‘ ٹیم میں نئے کھلاڑیوں کو موقع فراہم کرنے کی وکالت کرتے ہوئے آفریدی نے کہا کہ نئے چہروں کو شامل کرنے کا وقت آگیا ہے۔

’’جو بھی کھلاڑی اچھی کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کرتا ہے، اُسے ڈراپ کرکے نئے کھلاڑیوں کو موقع دیا جانا چاہیے۔ میں ہوں، یوسف، یونس یا پھر عمر گُل ہوں، جو پرفارم نہیں کرتا ہے، اسے آرام دے کر کسی نئے کھلاڑی کو ٹیم میں شامل کیا جانا چاہیے۔‘‘

محمد یوسف پر ٹیسٹ اور ون ڈے سیریز میں منفی حکمت عملی اختیار کرنے کے الزامات عائد کئے جا رہے ہیں۔ پاکستانی کرکٹ بورڈ نے صاف طور پر یہ کہہ دیا ہے کہ آسٹریلیا سیریز کے بعد یوسف کی جگہ کسی دوسرے کھلاڑی کو ٹیم کا کپتان مقرر کیا جائے گا۔ ایسا قوی امکان ہے کہ شاہد آفریدی ون ڈے فارمیٹ میں بھی ٹیم کی باگ ڈور سنبھالیں گے۔ پاکستانی ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے بھی آفریدی کو کپتان بنائے جانے کی تجویز کی حمایت کی ہے۔

رپورٹ: گوہر نذیر گیلانی/خبر رساں ادارے

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM