1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نائب امریکی صدر بائیڈن کا دورہِ لبنان

نائب امریکی صدر جو بائیڈن نے آج بیروت میں لبنانی صدر مِشیل سلیمان سے ملاقات کی۔ بائیدن نے لبنان میں جمہوریت اور خودمختاری کے لئے امریکہ کے بھرپور تعاون کا یقین دلایا۔

default

نائب امریکی صدر جوزف بائیڈن

جو بائیڈن نے لبنان کے صدر سے ملاقات میں بتایا کہ امریکہ کی لبنان کے لئے امداد کا دارومدار آئندہ انتخابات کے نتائج پر منحصر ہے۔ نائب امریکی صدر دورے کے دوران مغرب کے حمایت یافتہ لبنانی وزیر اعظم اور پارلیمان کےحزب اللہ جماعت سے تعلق رکھنے والے اسپیکر سے بھی ملاقات کریں گے۔

لبنان میں سات جون کو ہونے والے انتخابات سے قبل جو بائیڈن کے اس دورے کو حکومت مخالف گروپ حزب اللہ تنقید کا نشانہ بنائے ہوئے ہے۔ ماہرین کے مطابق حزب اللہ کو، جسے امریکہ دہشت گرد تنظیم قرار دیتا ہے، انتخابات میں کامیابی بھی حاصل ہوسکتی ہے،جس پر امریکہ کافی فکر مند ہے۔ اس سے قبل امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے بھی ایک ماہ قبل لبنان کا دورہ کیا تھا، جس میں انہوں نے اِس خطے میں امن امان کی بحالی کیلئے امریکی کوششوں کا ذکر کیا تھا۔

Joe Biden in Pristina

بائیڈن اس سے قبل کوسوو گئے تھے

حزب اللہ کے پارلیمانی ممبر حسن فضل اللہ نے امریکہ پر انتخابات میں مداخلت کا الزام لگاتے ہوئے پوری قوم سے درخواست کی کہ وہ سیاسی اختلافات سے قطع نظر لبنان کے داخلی امور میں امریکہ کی دخل اندازی کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں۔

حزب اللہ کے ان الزامات کے جواب میں جو بائیڈن نے کہا ہے کہ لبنان میں اُن کی آمد کا مقصد کسی ادارے یا کسی سیاسی جماعت کی حمایت کرنا نہیں ہے۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ لبنان میں حکومت کی تشکیل اور اس کی ساخت کا فیصلہ لبنان کی عوام کرے گی۔ اِس بیان کے بعد اُنہوں نے نا م لئے بغیر حزب اللہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ "جو لوگ امن برباد کرنے والوں کا ساتھ دینے کا سوچ رہے ہیں، اُنہیں میرا مشورہ ہے کہ وہ موقع سے فائدہ اٹھائیں اور ایسا نہ کریں"۔

امریکہ نے حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان جنگ کے بعد سے پچھلے تین برسوں میں لبنان کو 410 ملین ڈالر کی امداد فراہم کی ہے۔ اس امداد میں ہوائی جہاز، ٹینک اور فوجی مشینری مہیا کرنے کے علاوہ عسکری تربیت بھی شامل ہے۔ تاہم انتخابات میں حزب اللہ کی کامیابی کی صورت میں امریکہ کی جانب سے مزید امداد کا سلسلہ ختم ہونے کا خدشہ ہے۔