1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نئی یہودی بستیوں کی تعمیر، اسرائیل سے امریکہ ناراض

امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن نے اسرائیلی وزیراعظم کو خبردار کیا ہے کہ یروشلم مشرق وسطیٰ امن مذاکرات کے عمل کو اپنے منفی اقدامات سے متاثر کر رہا ہے۔

default

ہلیری کلنٹن نے اسرائیلی وزیر اعظم نتن یاہو سے ٹیلی فون پر گفتگو کرتے ہوئے نئی یہودی بستیوں کی تعمیر کے اعلان پر اپنے سخت ردعمل کا اظہار کیا۔ کلنٹن نے اس اسرائیلی اقدام کو ’انتہائی منفی‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ امریکی نائب صدر کے دورہء مشرق وسطیٰ کے موقع پر اس اعلان سے امریکہ کو شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا۔

جمعے کے روز امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن نے اسرائیلی وزیراعظم نتن یاہو سے 43 منٹ طویل ٹیلی فون گفتگو میں اس نئے اسرائیلی اعلان پر سخت غم وغصے کا اظہار کیا۔ امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان کے مطابق کلنٹن نے نتن یاہو سے کہا کہ واشنگٹن اور یروشلم کے باہمی تعلقات کے حوالے سے اسرائیل نے ایک انتہائی منفی اشارہ دیا ہے۔ ترجمان کے مطابق ہلیری کلنٹن نے یہ بھی کہا کہ وہ یہ سمجھنے سے قاصر ہیں کہ اسرائیل کی سلامتی کے حوالے سے مضبوط امریکی ارادے کی باوجود ایسا کیوں کیا گیا؟ کلنٹن کے مطابق اس قدم سے مشرق وسطیٰ میں قیام امن کی امریکی کوششوں کو شدید نقصان پہنچا ہے۔

Joseph Biden Israelische Flaggen

نئی یہودی بستیوں کی تعمیر کا فیصلہ امریکی نائب صدر کے دورے کے دوران کیا گیا

امریکی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ ہلیری کلنٹں نے اسرائیل پر واضح کر دیا کہ نتن یاہو حکومت صرف الفاظ سے نہیں بلکہ عملی اقدامات سے باہمی تعلقات کو فروغ دے اور مشرق وسطیٰ میں امن عمل آگے بڑھانے میں امریکہ کی مدد کرے۔

منگل کے روز اسرائیل کی جانب سے مقبوضہ مغربی کنارے میں 16 سو نئے یہودی مکانات کی تعمیر کا اعلان کیا گیا تھا اور یہ اعلان ٹھیک اس وقت کیا گیا جب امریکی نائب صدر جو بائیڈن فلسطینی انتظامیہ کو اسرائیل کے ساتھ ابتدائی طور پر بالواسطہ امن مذاکرات کا سلسلہ شروع کرنے پر آمادہ کر رہے تھے۔ مشرق وسطیٰ میں قیام امن کی کوششوں میں مصروف چار کے گروپ میں شامل امریکہ، یورپی یونین، اقوام متحدہ اور روس پہلے ہی اس نئے اسرائیلی اقدام کی مذمت کر چکے ہیں۔ اس گروپ کے مطابق اگلے ہفتے ماسکو میں اس حوالے سے ہونے والے اجلاس میں اس اعلان کے بارے میں بات چیت کی جائے گی۔

Nahostbesuch Ehud Barak und George Mitchell

جارج مچل اگلے ہفتے خطے کا ایک اور دورہ کریں گے

چار کے گروپ کی جانب سے جاری کردہ ایک مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ گروپ مشرق وسطیٰ کے حالات میں واقع ہوتی تبدیلیوں پر گہری نگاہ رکھے ہوئے ہے اور اس سلسلے میں وہ تمام اقدامات کئے جائیں گے، جن سے زمینی صورتحال میں بہتری لائی جا سکے۔

اس سے قبل فلسطینی انتظامیہ اسرائیل کے ساتھ بالواسطہ مذاکرات پر آمادہ ہوگئی تھی، تاہم اسرائیلی اعلان کے بعد ایک مرتبہ پھر یہ کہا گیا کہ ان یہودی تعمیرات کے تسلسل کی موجودگی میں مذاکرات انتہائی مشکل ہیں۔ امریکی نائب صدر جو بائیڈن نے اسرائیل اور فلسطینی انتظامیہ کے درمیان بالواسطہ مذاکرات کو براہ راست مکالمت کے آغاز کے لئے پہلی سیڑھی قرار تھا۔ اگلے ہفتے خطے کے لئے امریکی مندوب جارج مچل مشرق وسطیٰ کا دورہ کریں گے اور امریکی وزارت خارجہ کے بقول اس مرتبہ وہ فریقین کو بالواسطہ مذاکرات پر آمادہ کرنے میں کامیاب ہوجائیں گے۔ یہ قیاس آرائیاں بھی کی جا رہی ہیں کہ ان بالواسطہ مذاکرات میں مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں نئی یہودی بستیوں کے قیام اور ان میں توسیع پر پابندی، فلسطینی ریاست اور اسرائیل کے درمیان سرحدوں کا قیام اور یروشلم کی حیثیت کو حتمی شکل دینے جیسے معاملات میں کوئی نہ کوئی پیش رفت ممکن ہے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : مقبول ملک

DW.COM