1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

نئی یورپی یونین کی قیادت جرمنی کو کرنی چاہیے، لیخ ویلنسا

پولینڈ میں آزادی کی جدوجہد کی علامت سمجھے جانے والے سابقہ پولش صدر لیخ ویلنسا کا موقف ہے کہ طاقت کے سرچشمے جرمنی کو ممکنہ بریگزٹ کے تناظر میں مکمل طور پر اصلاح شدہ یا نئی یورپی یونین کی قیادت کرنی چاہیے۔

Deutschland Lech Walesa in Berlin

لیخ ویلنسا کی رائے میں جرمنی کو اس بات کا تخمینہ لگانا چاہیے کہ یورپی بلاک کی ترقی کے لیے کیا بہتر ہو گا

رائے عامہ کے تازہ جائزوں کے مطابق برطانیہ کے یورپی یونین چھوڑنے کی مہم زور پکڑتی جا رہی ہے۔ ویلنسا کا موقف رائے عامہ کے انہی جائزوں کی ایک کڑی ہے۔

برطانوی عوام رواں ماہ کی 23 تاریخ کو اس تاریخی ریفرنڈم میں حصہ لیں گے، جس میں برطانیہ کے یورپی یونین میں رہنے یا اسے خیر باد کہنے کا فیصلہ کیا جائے گا۔ ویلنسا نے پولینڈ کے شہر گڈانسک میں خبر رساں ادارے اے ایف پی کو دیے اپنے ایک انٹرویو میں کہا، ’’ بالخصوص جرمنی کو اس بات کا تخمینہ لگانا چاہیے کہ یورپی بلاک کی ترقی کے لیے کیا بہتر ہو گا۔ اس ضمن میں کیا ایک نیا ادارہ بنانا جانا چاہیے یا پھر موجودہ یورپی یونین میں پائی جانے والی کمزوریوں کو درست کرنا چاہيے؟ یہ فیصلہ جرمن حکومت کو کرنا چاہیے کیونکہ قیادت اس کے ہاتھ میں ہے اور اسے یہ فیصلہ بھی کرنا ہے کہ وہ کس کے ساتھ مل کر تعمیری عمل کا آغاز کرنا چاہتی ہے۔‘‘

Flaggen von Großbritannien und der EU

برطانوی عوام رواں ماہ کی 23 تاریخ کو یورپی یونین میں رہنے یا اسے خیر باد کہنے کا فیصلہ کریں گے

نوبل انعام یافتہ اور سن 1980 میں پولینڈ میں کمیونسٹ نظام کے خاتمے کے لیے پر امن مذاکرات کے لیے معروف سابقہ پولش صدر کا موقف ہے، ’’جرمنی کو اپنے شراکت دار ممالک فرانس اور اٹلی کے ساتھ مل کر یورپی یونین کے ٹوٹنے کی ممکنہ صورت میں فوری طور پر لاگو کرنے کے لیے ایک ہنگامی خاکہ تیار رکھنا چاہیے۔‘‘ انہوں نے مزید کہا، ’’یورپی یونین ٹوٹنے کے بعد ایک نئی یونین کا قیام لازمی ہے لیکن ضرورت اس امر کی ہے کہ اسے بہت سوچ سمجھ کر بنایا جائے تاکہ جن مسائل کا سامنا ہم اب کر رہے ہیں، ان کا دوبارہ سامنا نہ کرنا پڑے۔ جو نئی یورپی یونین کا حصہ بننا چاہتے ہیں، ہمارے ساتھ آ سکتے ہیں اور جو نہیں آنا چاہتے وہ صرف ’جی نہیں شکریہ ‘ کہہ سکتے ہیں۔ ‘‘

72 سالہ تجربہ کار پولش سیاست دان کا ماننا ہے کہ 28 رکنی یورپی یونین جس بحران سے گزر رہی ہے اس کا سبب مشترکہ اقدار کا رائج نہ ہونا ہے۔ انہوں نے اس حوالے سے اپنا مؤقف بتاتے ہوئے کہا، ’’ہم عیسائیت کو مسترد کر چکے ہیں۔ ہم نے کمیونزم جیسے نظریات کو بھی مسترد کر دیا ہے اور اب کچھ باقی نہیں بچا ہے۔ ہم ایسے معاشروں سے کیا توقع کر سکتے ہیں جن میں سے ہر ایک کی بنیاد مختلف اقدار پر ہے۔‘‘

عالمی سطح پر سرگرم عمل ویلنسا کا یہ بھی کہنا تھا کہ سیاسی اور اقتصادی انضمام کے لحاظ سے ایک زیادہ مرکزی یورپ کی تشکیل کے لیے یہ بہترین وقت ہے۔ ویلنسا کا ماننا ہے کہ بریگزٹ کی صورت میں خود ان کے ملک پولینڈ کو یورپی ڈھانچے سے جڑے رہنا چاہیے۔

DW.COM