میں آپ کا شکر گزار ہوں، بشار الاسد | حالات حاضرہ | DW | 21.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میں آپ کا شکر گزار ہوں، بشار الاسد

شامی صدر بشار الاسد نے اپنے دورہ روس کے دوران روسی صدر ولادیمیر پوٹن سے ملاقات کی ہے۔ کریملن نے بتایا ہے کہ اس دوران شام کی موجودہ صورتحال اور وہاں قیام امن کی کوششوں پر تبادلہ کیا گیا۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے روسی حکام کے حوالے سے اکیس نومبر بروز منگل بتایا ہے کہ شامی صدر بشار الاسد نے روسی شہر سوچی میں ولادیمیر پوٹن سے مفصل ملاقات کے دوران شام کی صورتحال اور شدت پسندوں کے خلاف جاری عسکری کارروائی پر تبادلہ خیال کیا ہے۔ اس دوران دونوں رہنماؤں نے اس شورش زدہ ملک میں قیام امن کی کوششوں پر بھی بات چیت کی۔

شامی جنگ کا کوئی فوجی حل نہیں، پوٹن اور ٹرمپ میں اتفاق رائے

شام نے ملک بھر میں داعش کے خلاف کامیابی کا اعلان کر دیا

شامی جنگ دیرالزور میں ختم نہیں ہوئی، بشارالاسد

ویڈیو دیکھیے 01:41
Now live
01:41 منٹ

حلب: معمول کی زندگی کی طرف لوٹتا ہوا

روس کے سرکاری نشریاتی ادارے کے مطابق اس ملاقات میں پوٹن نے اسد سے کہا، ’’ہم دہشت گردوں کے خلاف مکمل کامیابی حاصل کرنے کے حوالے سے ابھی کافی دور ہیں۔ لیکن جہاں تک شام میں دہشت گردوں کے خلاف روس اور شام کی مشترکہ کوششوں کا تعلق ہے تو اس میں بہتری پیدا ہو رہی ہے۔‘‘ پوٹن نے کہا کہ وہ اسد سے ملاقات کے بعد امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور مشرق وسطیٰ کی ریاستوں کے سربراہوں سے بھی رابطے کریں گے۔

شام کے اتحادی ملک روس کی کوشش ہے کہ شام میں قیام امن ممکن ہو جائے، اسی مقصد کی خاطر ماسکو حکومت عالمی سطح پر متعدد ریاستوں سے رابطے میں ہے۔ اسی مقصد کے لیے بدھ کے دن روسی صدر سوچی میں ہی ایران اور ترکی کے صدور سے بھی ملیں گے۔ ساتھ ہی روسی فوجیں شام میں داعش کے خلاف جاری کارروائیوں میں شامی فورسز کو مدد بھی فراہم کر رہی ہیں۔

روسی صدر پوٹن نے اپنے شامی ہم منصب سے ملاقات میں انہیں مبارکباد دی کہ وہ کامیابی کے ساتھ دہشت گردوں کے خلاف کارروائی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ پوٹن نے کہا کہ تاہم اب وقت آ گیا ہے کہ شام میں امن قائم کرنے کی خاطر سیاسی کوششوں کا آغاز کیا جائے۔ پوٹن نے اسد سے مخاطب ہوتے ہوئے مزید کہا، ’’میں آپ کی اس رضامندی سے مطمئن ہوں کہ آپ اُن فریقین سے مل کر قیام امن اور مسائل کا حل چاہتے ہیں، جو اس تنازعے کا خاتمہ چاہتے ہیں۔‘‘

اس موقع پر بشار الاسد نے کہا کہ شام کی صورتحال میں بہتری ہوئی ہے اور دمشق حکومت اب سیاسی حل کی جانب دھیان دینے کے قابل ہو گئی ہے۔ شامی صدر نے دمشق حکومت اور عوام کی ایماء پر روسی صدر پوٹن کا شکریہ ادا بھی کیا، ’’ آپ نے جو کچھ بھی کیا، میں اس کے لیے شکرگزار ہوں۔‘‘

کریملن نے بتایا ہے کہ پوٹن اور اسد کے مابین یہ ملاقات پیر کی شام سوچی میں ہوئی۔ تاہم روسی حکام نے منگل کے دن بتایا کہ شامی صدر نے روس کا دورہ کیا ہے۔ یہ امر اہم ہے کہ اسد کے مخالفین اور مغربی ممالک کا الزام ہے کہ روسی عسکری کارروائی کی وجہ سے شام میں بڑے پیمانے پر شہری ہلاکتیں بھی ہوئی ہیں۔ تاہم ماسکو ان الزامات کو مسترد کرتا ہے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic