1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

’میرے بچے کا دل سشما سوراج کے لیے دھڑکتا ہے‘

پاکستانی بچے روحان کے والد کمال صدیقی کا کہنا ہے کہ ان کے بیٹے کا بھارت میں کامیاب علاج ہو گیا ہے۔ انہوں نے بھارتی وزیر خارجہ کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ ان کے بیٹے کا دل سشما سوراج کے لیے دھڑکتا ہے۔

اسلام آباد میں بھارت کے ہائی کمیشن نے بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج کے کہنے پر اس بچے اور اس کے والدین کو ویزا جاری کیا تھا۔  اس بچے کا علاج ’جے پی‘ ہسپتال میں  کیا گیا تھا۔ روحان کے دل میں سوراخ  تھا اور ڈاکٹروں کے مطابق  اس بچے کو لاحق بیماری کا علاج آٹھ ماہ کی عمر سے قبل ہونا چاہیے تھا، اس کے بعد اس مرض کا علاج ممکن نہیں تھا اور اس کی جان کو خطرات لاحق ہو سکتے تھے۔ 

گزشتہ روز اس بچے کے والد نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا،’’میرے ویزے میں وقت لگ رہا تھا، میرے دوست نے بتایا کہ آپ سشما سوراج کو ٹوئٹ کریں۔ میں نے صرف اپنے بیٹے کے لیے ٹوئٹر اکاؤنٹ بنایا  تھاکہ میں سشما سوراج سے ٹوئٹ پہ رابطہ کر سکوں۔ میرے لیے یہ بات ناقابل یقین تھی کہ بھارت کی وزیر خارجہ نے میری ٹوئٹ کا جواب دیا۔‘‘

 کمال صدیقی نے کہا،’’ جب روحان کو میں نے اتنی تکلیف میں دیکھا تو ہم سب گھر والے بہت پریشان تھے۔ ایک مہینے میں ہماری زندگیاں تبدیل ہو گئی تھیں۔ ہر شخص اپنی اولاد کا علاج چاہتا ہے اور آپ انہیں تکلیف میں نہیں دیکھ سکتے۔‘‘

Indien Kind mit acht Gliedmaßen erfolgreich operiert (imago/Hindustan Times)

 روحان کے دل میں سوراخ  تھا

کمال صدیقی نے بھارتی حکومت سے درخواست کی وہ تمام میڈیکل ویزا سے ہر قسم کی پابندی ہٹا دیں اور انسانی بنیادوں پر ان تمام پاکستانیوں کو ویزا دیں جو علاج کے مقصد سے بھارت آنا چاہتے ہیں۔ ۔

DW.COM