1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میرکل کا دورہٴ امریکا، توقعات اور امیدیں

جرمن چانسلر کو اگلے ہفتے کے دوران شروع ہونے والے امریکی دورے کے دوران کئی چیلنجز کا سامنا ہو سکتا ہے۔ وہ یقینی طور پر امریکی صدر ٹرمپ کے ساتھ مناسب ’ورکنگ ریلیشنز‘ استوار کرنے کی کوشش کریں گی۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل اگلے ہفتے کے دوران ایک بڑے تجارتی وفد کے ساتھ امریکا کا دورہ کریں گی۔ اس دورے کے دوران وہ وائٹ ہاؤس میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات بھی کریں گی۔ جرمن چانسلر کے امریکی دورے کے حوالے سے یورپی کونسل برائے خارجہ امور کے برلن دفتر کے سربراہ یوزیف یاننگ کا خیال ہے کہ امریکی سیاست کے تناظر میں جرمن چانسلر کا یہ دورہ انتہائی پیچیدگیوں کا حامل ہو سکتا ہے۔

اسی طرح امریکا کی جان ہوپکِنز یونیورسٹی کے اطالوی شہر بولونا میں واقع یورپی کمیپس سے منسلک امریکی خارجہ پالیسی کے ماہر جان ہارپر کا خیال ہے کہ چانسلر میرکل یقینی طور پر ایک نیا راستہ اپناتے ہوئے واشنگٹن حکومت کے ساتھ مناسب تعلقات کو آگے بڑھانے کی خواہش مند ہیں کیونکہ ڈونلڈ ٹرمپ سابق امریکی صدور اوباما اور بُش کے مقابلے میں ایک علیحدہ شناخت رکھتے ہیں۔ ہارپر کے مطابق اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ ٹرمپ کا حکومت یا حکومتی عمل کے ساتھ قربت کا کوئی سابقہ تجربہ نہیں ہے۔

Bildcollage Donald Trump Angela Merkel lächelnd (picture-alliance/dpa/J. Knappe & Reuters/K. Lamarque)

جرمن چانسلر انگیلا میرکل اگلے ہفتے کے دوران ایک بڑے تجارتی وفد کے ساتھ امریکا کا دورہ کریں گی

میرکل کے وفد میں صنعتی گروپ سیمینز کے سربراہ جو کیزر اور کار ساز ادارے بی ایم ڈبلیو کے سربراہ ہارالڈ کرُوگر بھی شامل ہوں گے۔ ماہرین کا خیال ہے کہ جرمن چانسلر یہ وفد ایسے وقت میں امریکا لے کر جا رہی ہیں جب ٹرمپ کا نعرہ ’پہلے امریکا‘ ہے اور امریکی مال کی کھپت اولین ترجیح ہے۔ دونوں لیڈروں کے سیاسی نظریات میں بھی بظاہر ’طرز فکر‘ کا فرق ہے۔ میرکل عالمی امور میں تعاون اور کثیر الجہتی انداز کی حامی ہیں جب کہ امریکی صدر اس تناظر میں امریکی قوت کا سکہ جمانے کی کوشش میں ہیں۔

اس باعث عالمی امور کے ماہرین بشمول یاننگ اور ہارپر، اس دورے سے کوئی بڑی امید نہیں رکھتے۔ یاننگ کے مطابق میرکل جی ٹوئنٹی کے پلیٹ فارم پر معاملات کے حل کے لیے امریکی صدر سے تعاون کے فروغ کی توقع کرتی ہیں۔ ترقی یافتہ اور ترقی پذیر اقوام کے گروپ جی ٹوئنٹی کا سربراہی اجلاس رواں برس کے وسط میں جرمنی کی میزبانی میں ہیمبرگ میں منعقد ہو گا۔

اس دورے کے دوران ایک اور بڑا موضوع امریکا اور یورپی یونین کے تعلقات بھی ہوں گے۔ میرکل نے اپنے اس دورے کے حوالے سے کہا ہے کہ وہ امریکا کے دورے کے دوران جرمن حکومتی سربراہ کے  علاوہ یورپی یونین کی سفیر کا فریضہ بھی انجام دیں گی۔ چانسلر میرکل کو سابق امریکی صدر باراک اوباما کا انتہائی قریبی بین الاقوامی پارٹنر قرار دیا جاتا تھا۔