1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

میانمار میں بان کی مُون کا دورہ ختم

اقوام متحدہ کے سیکریٹیری جنرل نےمیانمار یا سابقہ برما کے تاریخی دورے کو مکمل کر لیا ہے۔ اُن کا دورہ جمعہ کے دِن شروع ہوا تھا۔ اُن کی فوجی سربراہ جنرل تھان شوئے سےدو ملاقاتیں ہوئیں مگر وہ خالی ہاتھ رہے۔

default

بان کی مون

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون کے میانمار کےتاریخی دورے مکمل کرنے کے بعد اپنی اگلی منزل کو روانہ ہو چکے ہیں۔ ماینمار کے دورے کے دوران وہ اپنے اہداف کے حصول میں ناکام رہے اور بان کی مون نے اِس کا اعتراف بھی کیا۔

اُنہوں نے جمعہ کے علاوہ ہفتہ کے دِن کی فوجی حکومت کے سربراہ جنرل Than Shwe سے ملاقات کے دوران مقید خاتون اپوزیشن لیڈر سے ملاقات تجویز کی تھی۔ مگر یہ سب کچھ ممکن نہیں ہو سکا۔ دوسری ملاقات میں بھی جنرل تھان شوئے نے اُن کی خواہش کو پورا کرنے پر کوئی حامی نہ بھری۔

پہلے دِن یعنی جمعہ کو بان کی مون سے میانمار کے فوجی سربراہ کی ملاقات دو گھنٹے تک جاری رہی۔ ملاقات کے وقت جنرلThan Shwe اپنی گہری سبز فوجی وردی میں ملبوس تھے۔

Than Shwe, Führer der burmesischen Militärjunta

میانمار کے اعلیٰ فوجی سربراہ جنرل تھان شوئے

فوجی سربراہ سے ملاقات کے حوالے سے بان کی مون کا کہنا ہے کہ انہوں نے جنرل سے اگلے سال مجوزہ عام انتخابات سے قبل خاتون سیاسی لیڈر کے علاوہ دوسرے دو ہزار سیاسی قیدیوں کی رہائی کے بارے میں بھی بات کی۔

بان کی مون کا ملاقات کے بعد کہنا تھا کہ انہوں نے تین معاملات پر اپنی تشویش سےفوجی سربراہ کو آگاہ کیا، پہلی جمہوری عمل میں تیزی لائی جائے، جو عالمی برادری کی خواہش ہے، دوسری سن دو ہزار دس کے الیکشن سے قبل آؤنگ سان سوچی سمیت دوسرے قیدیوں کی رہائی اور تیسری الیکشن کا شفاف اور جائز انداز میں انعقاد۔

Aung San Suu Kyi

میانمار کی مقیّد خاتون سیاسی لیڈر سے بان کی مون ملنے کے متمنی ہیں۔

سیکریٹری جنرل کے ساتھ گئے عملے کے مطابق ملاقات کے دوران فوجی جنرل کی جانب سے قیدیوں کی رہائی کا وعدہ بھی سامنے آیا۔

اقوام متحدہ کے ذرائع کے مطابق سیکریٹری جنرل نے فوجی جنرل سے پانچ نکاتی ایجنڈے پر تفصیل سے بات کی۔ پانچوں نِکات میانمار میں جمہُوری اقدار کے فروغ سے متعلق تھے۔ اُن کے مطابق بات چیت خاصی جاندار تھی اور سیکریٹری جنرل کو کئی نکات پر فوجی جنرل کی جانب سے مزاحمت کا سامنا ہوا۔ اقوام متحدہ کے مستقل دفتر کا قیام، جس میں عالمی ادارے کے سربراہ کے خصوصی نمائندے ابراہیم گمباری کا دفتر بھی ہو وغیرہ پر بات آگے نہیں بڑھ پائی۔

آؤنگ سان سوچی سے بان کی مون کی ملاقات کے حوالے سے میانمار کی فوجی حکومت کی جانب سے حیلے بہانے سامنے آئے ہیں

عالمی ادارے کے سربراہ جنرل Than Shwe سے ملنے میانمار کے نئے انتظامی دارالحکومت نپ یا دیو گئے تھے۔

جمعہ کے دِن ینگون کی جیل میں آؤنگ سان سوچی کے خلاف بنائے گئے مقدمے کی دوبارہ کارروائی شروع ہوئی، جسے جج نے اگلی پیشی تک کے لئے ملتوی کر دیا۔ اِس مقدمے کے حوالے سے برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن کا تازہ بیان سامنے آ یا ہے، جس میں انہوں نے مقدمے کو ختم کرتے ہوئے خاتون سیاسی لیڈر کی رہائی کے مطالبے کا اعادہ کیا ہے۔