1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

میانمار: سوچی نے الزامات کی تردید کردی

جمعے کے روز ایک فوجی عدالت میں پیشی کے دوران میانمار کی جمہوریت پسند حزبِ مخالف رہنما آؤنگ سان سوچی نے اپنے اوپر عائد الزامات کی تردید کی ہے۔

default

خدشہ ہےکہ حکومت سوچی کو لمبے عرصے تک جیل میں قید رکھنا چاہتی ہے

واضح رہے کہ سوچی طویل عرصے سے گھر میں نظر بند تھیں اور حال ہی میں میانمار کی فوجی حکومت نے انہیں حکومت مخالف منصوبے میں ملوّث ہونے کے الزام میں جیل میں بند کردیا ہے۔

میانمار کی فوجی خنتا نے دعویٰ کیا ہے کہ ایک امریکی باشندہ حزبِ مخالف رہنما آؤنگ سان سوچی کے گھر تک تیر کر پہنچنے کی کوشش کر رہا تھا۔ فوجی حکومت کے مطابق یہ حکومت مخالف منصوبے کا حصّہ تھا۔ فوجی حکومت کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس واقعے میں ملکی اور غیر ملکی عناصر ملوّث ہیں۔

Aung San Suu Kyi

جمعہ کے روز ایک پیشی کے دوران سوچی نے اپنے اوپر عائد الزامات کی تردید کی ہے


واضح رہے کہ نوبیل امن انعام یافتہ، جمہوریت پسند رہنما سوچی پر اس واقعے کی بنیاد پر ایک مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔ عرصے سے سوچی گھر پر نظر بند تھیں اور میانمار کی فوجی خنتا کے مطابق امریکی شخص کی سوچی کے گھر تک تیر کے جانے کی کوشش نظر بندی کے ضمن میں طے شدہ اصولوں کی خلاف ورزی تھی۔ سوچی کے وکیل نے ان الزامات کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ امریکی شخص کا سوچی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

یورپی یونین سمیت امریکہ اور بین الاقوامی برادری نے سوچی پر اس نئے مقدمے کی شدید مذمت کی ہے اور سوچی کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔ عالمی مالیاتی بحران کے حوالے سے پیر کے روز ویت نام میں یورپی اور ایشیائی رہنماؤں کا ایک اجلاس منعقد ہوگا تاہم مبصرین کے مطابق اس بات کا امکان ہے کہ آؤنگ سن سوچی کا مقدمہ اس اجلاس میں زیادہ اہمیت اختیار کر جائے۔ گو کہ زیادہ تر ایشیائی ممالک نے سوچی پر مقدمے کی مذمت کی ہے تاہم میانمار حکومت کے سب سے بڑے حمایتی ملک چین کا موقف ہے کہ میانمار کے اندرونی معاملات میں دیگر ممالک کی مداخلت کا جواز نہیں ہے۔

یہ اطلاعات بھی ہیں کہ جس گھر میں آؤنگ سان سوچی کو نظر بند رکھا گیا تھا اس کے اطراف سے حکومت نے حصار ختم کرنا شروع کردیا ہے۔ اس حکومتی کارروائی سے اندیشہ پیدا ہو رہا ہے کہ میانمار کی حکومت سوچی کو طویل عرصے تک اب جیل میں مقیّد رکھنا چاہتی ہے۔