1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

مہنگی غلطی: بینک نے اکاؤنٹ ہولڈر کو چھ بلین ڈالر بھیج دیے

جرمنی کے سب سے بڑے کمرشل بینک ڈوئچے بینک نے اپنے ایک اکاؤنٹ ہولڈر کو غلطی سے چھ بلین ڈالر بھیج دیے تاہم اس ’مہنگی غلطی‘ کا علم ہونے کے اگلے ہی دن بینک نے اربوں ڈالر کی یہ رقم اکاؤنٹ ہولڈر سے واپس لے لی۔

برطانوی دارالحکومت لندن سے موصولہ نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق امریکی نشریاتی ادارے بلومبرگ نیوز نے جرمنی کے اس سب سے بڑے بینک کے باخبر ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ ’حساب کتاب میں اربوں ڈالر کی یہ غلطی‘ اس بینک کے سرمایہ کاری شعبے کی زرمبادلہ کی فروخت سے متعلق ٹیم کے ایک جونیئر رکن سے اس سال جون میں سرزد ہوئی۔

بلومبرگ نیوز کی رپورٹ کے مطابق اس بینک کے متعلقہ کارکن نے غلطی سے چھ بلین ڈالر مالیاتی بانڈز کی تجارت کا کام کرنے والے ایک اکاؤنٹ ہولڈر کے نام منتقل تو کردیے تاہم اگلے ہی روز اس غلطی کا احساس ہو جانے پر یہ رقم واپس بینک کے اکاؤنٹ میں منتقل کر دی گئی۔

ڈوئچے بینک کا صدر دفتر جرمنی کے مالیاتی مرکز فرینکفرٹ میں ہے اور اے ایف پی کے مطابق یہ غلطی اس بینک کو درپیش ایسے اسکینڈلز کی تازہ ترین مثال ہے، جن کی وجہ سے اس مالیاتی ادارے نے گزشتہ ویک اینڈ پر اپنے کاروباری اور انتظامی شعبے میں بڑی تبدیلیاں بھی متعارف کرائی تھیں۔

اس بینک کے دو چیف ایگزیکٹوز آنشو جین اور ژُرگن فِچن اس سال جون میں اپنے عہدوں سے اس لیے مستعفی ہو گئے تھے کہ یہ بینک سالانہ منافع سے متعلق اپنے اعلان کردہ اہداف حاصل کرنے میں ناکام رہا تھا۔

ڈوئچے بینک کو اس وقت اپنے خلاف قریب 600 قانونی مقدمات کا سامنا ہے اور اسے اسی سال مئی میں شرح سود کے تعین میں ملی بھگت کے جرم میں ریکارڈ حد تک زیادہ 2.5 بلین ڈالر جرمانہ بھی کیا گیا تھا۔