1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کی اسمگلنگ: ’ٹرانسپورٹ سروس کی تشہیر انٹرنیٹ پر‘

ماہرین کے مطابق بحیرہ روم کے راستے مہاجرین کی اسمگلنگ کرنے والے گروہ اپنی ’ٹرانسپورٹ سروس‘ کی تشہیر آن لائن صفحات، سوشل نیٹ ورکس اور مختلف چیٹ رومز میں کر رہے ہیں، جو خطرناک رحجان ہے۔

آن لائن پلیٹ فارمز اور سوشل نیٹ ورکس اب ممکنہ طور پر مہاجرت اختیار کرنے والوں اور غیر قانونی طور پر بحیرہ روم کے راستے یورپ پہنچنے کے خواہش مند افراد کے لیے اس حوالے سے معلومات کے حصول کا ذریعہ بن رہے ہیں۔ مہاجرین کے اسمگلر سینکڑوں آن لائن صفحات پر یورپ کے سفر کے لیے اپنی ’خدمات‘ کی تشہیر کرتے ہیں تاہم یہ معلومات زیادہ تر خطرناک اور جھوٹ پر مبنی ہوتی ہیں۔

اٹلی کی ٹرینٹو یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے محقق گابریئلے بارَٹو کا کہنا ہے کہ مہاجرت پر مائل افراد اسے ایک ’اچھا موقع‘ تصور کرتے ہیں۔ بارَٹو ’کرائم اینڈ سکیورٹی‘ کے امور پر تحقیق کام کرنے والے ایک ادارے سے منسلک ہیں۔ بارَٹو کے مطابق، ’’ایسے سینکڑوں ویب پیجز اور فیس بک گروپ موجود ہیں، جو اس خطرناک سفر کے لیے اپنی خدمات کی پیشکش کرتے ہیں۔‘‘

ان اشتہارات میں ترکی، لیبیا، مشرقِ وسطیٰ اور شمالی افریقہ کے ممالک سے ایسے سفر کے انتظام کے بارے میں بتایا جاتا ہے۔ علاوہ ازیں رابطے کے لیے فون نمبر بھی دیے جاتے ہیں۔ فون کال کے دوران سفر کے حوالے سے مختلف تجاویز سامنے رکھی جاتی ہیں۔ یورپ کا قصد کرنے والے مہاجرین کو ’روم اینڈ بورڈ’ کے نام سے سروس فراہم کرنے کے سنہری باغ بھی دکھائے جاتے ہیں۔

Bildergalerie - Thailand schleppt Flüchtlingsschiff auf das offene Meer zurück (Getty Images/Afp/C. Archambault)

بارَٹو کا کہنا تھا کہ اس مسئلے کا سب سے مؤثر حل سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر آگہی مہم چلانا ہے

ان میں دس ہزار یورو فی کس لے کر چند افراد کو لے جانے والی بادبانی کشتی سے لے کر سستی مگر خطرناک ترین کشتیوں کا انتخاب بھی کیا جا سکتا ہے۔ بارَٹو نے مہاجرین کے بحران کے حوالے سے لمحہ بہ لمحہ باخبر رکھنے والی یورپی ویب سائٹ ’انفو امیگرانٹ‘ کو بتایا، ’’انسانوں کے یہ اسمگلر، غیر قانونی راستوں اور مہاجرت سے متعلق سیاستدانوں کے بیانات اور قوانین سے بخوبی واقف ہوتے ہیں۔ وہ جانتے ہیں کہ یورپی پالیسیوں میں کمزوریوں کا کیسے اپنے فائدے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ یہ اسمگلر  وقت کے مطابق اپنی حکمت عملی تبدیل کرنے کا طریقہ بھی جانتے ہیں۔‘‘

گابریئلے بارَٹو کا کہنا ہے کہ سب سے سنگین خطرہ یہ ہےکہ ’روم اینڈ بورڈ‘ کے نام سے جو پیشکش مہاجرت سے قبل ان افراد کو کی جاتی ہے، وہ تقریباﹰ کبھی بھی حقیقت پر مبنی نہیں ہوتی۔ لیبیا میں قیام و طعام کی سہولت فراہم کرنے کے وعدے پر یقین کرنے والوں کو وہاں آ کر پتہ چلتا ہے کہ دراصل انہیں حراستی مراکز میں رکھا جا رہا ہے، جہاں تارکینِ وطن پر تشدد کیا جاتا ہے اور خواتین کو ریپ کیا جاتا ہے۔

بارَٹو کا کہنا تھا کہ اس مسئلے کا سب سے مؤثر حل غیر قانونی نقل مکانی کے خطرات کے حوالے سے سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر آگہی مہم چلانا ہے۔ اس کے علاوہ بارَٹو کی تجویز کے مطابق سکیورٹی افسروں کو چاہیے کہ وہ انٹرنیٹ پر ایسی ویب سائٹسں کو بھی چیک کرتے رہیں، جہاں یورپ کے غیر قانونی سفر کے لیے اسمگلر اپنی خدمات کی تشہیر کرتے ہیں۔

DW.COM