1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کو جرمن زبان سکھانے کے پروگرام پیسے کا ضیاع ہیں، جرمن آڈیٹر

جرمنی کے قومی آڈیٹر دفتر نے وفاقی محکمہء روزگار پر الزام عائد کیا ہے کہ مہاجرین کو جرمن زبان سکھانے کے پروگرام پیسے کے ضیاع کا باعث بن رہے ہیں۔

جرمن آڈیٹر دفتر کا کہنا ہے کہ لیبر آفس مہاجرین کو جرمن زبان سکھانے سے متعلق جو پروگرام شروع کیے ہوئے ہے، وہ صرف اور صرف پیسےکا ضیاع ہے۔ اس کے جواب میں محکمہء روزگار نے کہا ہے کہ یہ تجزیہ انتہائی قلیل وقتی معلومات کی بنیاد پر کیا گیا ہے۔

جرمن نیشنل آڈیٹر آفس نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ سن 2015ء میں مہاجرین کے بحران کے عروج کے دور سے اب تک شروع اور جاری رکھے جانے والے جرمن زبان کے بنیادی کورسز کے اطلاق اور مالی انتظام پر قابو نہیں رکھا گیا ہے۔ جرمن نشریاتی ادارے این ڈی آر نے منگل کو اس رپورٹ کی تفصیلات جاری کی ہیں۔

آڈیٹرز کا کہنا ہے کہ محکمہء روزگار ان کورسز کی نگرانی، برے تربیتی مواد اور غلط رسیدوں کے معاملات میں کمزور رہا ہے۔

Deutschland Deutschunterricht für Flüchtlinge in Bonn-Bad-Godesberg (DW/R. Shirmohammadi)

مہاجرین کے لیے جرمن زبان کے کورسز جاری ہیں

این ڈی آر کے معلوماتی پروگرام میں نیشنل آڈیٹر دفتر کے سربراہ کے شیلر کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ یہ کورسز مسائل زدہ ہیں اور خصوصاﹰ نگرانی کا عمل درست نہیں ہے۔

دوسری جانب جرمن ایجنسی برائے روزگار نے اپنے ان تربیتی پروگراموں کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کورسز نے مطلوبہ اہداف اس لیے حاصل نہیں کیے کیوں کہ انہیں صرف دو ماہ کی پیشگی اطلاعات پر شروع کیا گیا۔ ’’تربیتی کورسز مہیا کرنے والے زیادہ افراد کی ضرورت کی وجہ سے مواد، طریقہء کار، عمل درآمد اور تدریس کے شعبے پر توجہ دینا ممکن نہیں تھا۔‘‘

آڈیٹر دفتر کا کہنا ہے کہ ان پروگراموں میں اب تک استعمال کیے جانے والے قریب چار سو ملین یورو نہایت برے انتظام کا شکار ہو گئے اور  زیادہ تر اہداف پورے نہیں ہو سکے۔ اس رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کچھ مالیاتی بے ضابطگیاں بھی موجود ہیں، جن کی وجہ ایک ہی کام کے لیے دو دو رسیدوں اور دو دو بار ادائیگیوں کی صورت میں ہوئی ہیں۔ تاہم محکمہ روزگار ایسے ادا کیے گئے پیسے واپس لے چکا ہے۔