1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کا بحران، یورپی شہروں کی مزید رقم حاصل کرنے کی کوشش

مہاجرین کے بحران کے تناظر میں مختلف یورپی شہر روایت کے برخلاف، قومی سطح پر پالیسی کی تیاری میں نمایاں کردار ادا کر رہے ہیں۔ اس کوشش کا مقصد زیادہ سے زیادہ وسائل کا حصول ہے تاکہ مہاجرین کو بہتر سہولیات پہنچائی جا سکیں۔

یورو سٹیز کے ایک سروے کے مطابق یورپ کے مختلف ممالک میں ضلعی اور مقامی انتظامیہ قانونی طور پر مکمل اختیار نہ ہونے اور مہاجرین کے سیلاب کو سنبھالنے کے حوالے سے وسائل کی کمی کی وجہ سے انتہائی مایوسی کا شکار ہیں۔ مثال کے طور پر آسٹریا کی بات کی جائے تو ویانا سوشل فنڈ کو شہری انتظامیہ مالی تعاون فراہم کرتی ہے اور اس شہر نے پناہ گزینوں کے اندارج اور ان کے لیے شناختی کارڈ کا نظام متعارف کرایا ہے۔ اسی طرح جرمن شہر ڈسلڈورف کی مقامی انتظامیہ نے پناہ گزینوں کے لیے ایک کمشنر تعینات کیا ہے، جس کی ذمہ داری پناہ گزینوں کے مراکز کی صورتحال اور دیگر سہولیات کی نگرانی کرنا ہے۔

اس جائزے کے مطابق گزشتہ برس کے دوران یورپی یونین میں سیاسی پناہ کی درخواستیں دینے والے افراد کی تعداد دس لاکھ سے زائد تھی،’’ بہت سے شہروں نے پناہ گزینوں کو خوش آمدید کہنے کے انتظامات بھی خود ہی کیے تھے۔‘‘ اس دوران شہریوں نے ان کاموں میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیا تھا۔ اس سلسلے میں ایتھنز، ویانا اورمیونخ مہاجرین کے بحران سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے شہر ہیں۔

ایتھنز میں جنوری 2014ء سے دسمبر 2015ء تک پانچ لاکھ افراد نے سیاسی پناہ کی درخواستیں جمع کرائی تھیں۔ میونخ میں اسی ہزار جبکہ اس دوران برلن اور ویانا میں انہتر انہتر ہزار افراد نے پناہ حاصل کرنے کی کوشش کی۔

اس جائزہ کے نتائج پر رپورٹ مرتب کرنے والے تھومس یزیکوئل نے بتایا، ’’مثال کے طور پر ایتھنز حکام نے یورپی کمیشن سے مزید امداد لینے کے لیے اقوام متحدہ کے ادارے برائے مہاجرین سے رابطہ کیا۔‘‘ ان کے بقول ایسے شہروں کی انتظامیہ کے ساتھ مالی تعاون کرنے سے اُن مسائل کو حل کرنے میں مدد ملے گی، جو بڑی تعداد میں مہاجرین کی آمد سے پیدا ہوئے ہیں۔ اس جائزہ کے مطابق بڑی تعداد میں مہاجرین کی آمد اور وفاقی حکومتوں کے سست ردعمل نے ضلعی اور شہری انتظامیہ کو اپنا کردار ادا کرنے پر مجبور کیا ہے۔