1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کا بحران: جرمنی نے سوئس سرحد پر نگرانی بڑھا دی

اطلاعات کے مطابق جرمن حکام نے سوئٹزرلینڈ کے ساتھ جرمنی کی سرحد پر نگرانی بڑھا دی ہے۔ سوئس وزیر اقتصادیات کا کہنا ہے کہ یہ عمل اس بات کا ثبوت ہے کہ جرمنی مہاجرین کو خوش آمدید کہنے کی اپنی پالیسی سے پیچھے ہٹ رہا ہے۔

جرمنی کے وزیر داخلہ نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ جرمن سوئس سرحد پر آنے جانے والوں کی نگرانی کے عمل کو سخت کر دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ دونوں یورپی ممالک کے شینگن زون میں ہونے کی وجہ سے سرحد پر نگرانی کی کوئی ضرورت نہیں اور یورپی شہری بغیر ویزے کے ان ممالک میں آ جا سکتے ہیں، تاہم یورپ کو درپیش مہاجرین کے بحران کی وجہ سے صورت حال تبدیل ہوتی جا رہی ہے۔

واضح رہے کہ مشرق وسطیٰ کے جنگ زدہ علاقوں، بالخصوص شام اور عراق سے بڑی تعداد میں مہاجرین یورپی پہنچے ہیں۔ ان میں سے بیشتر جرمنی اور دیگر مغربی یورپی ممالک پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ تاہم خاصی بڑی تعداد ان افراد کی بھی ہے جو جنگ کی وجہ سے نہیں بلکہ روزگار کے بہتر مواقع تلاش کرنے کی غرض سے یورپ اور جرمنی آئے ہیں۔ جرمن حکومت واضح کر چکی ہے کہ اسلامی شدت پسندی سے بچ کر اور لُٹ پٹ کر یورپ آنے والوں کو تو پناہ دی جا سکتی ہے، تاہم ’اقتصادی مہاجرین‘ کی ملک میں کوئی گنجائش نہیں ہے۔

جرمنی کے علاوہ سوئٹزرلینڈ میں بھی مہاجرین کے بہاؤ کو روکنے کے لیے سرکاری سطح پر اقدامات کر رہے ہیں۔ اس یورپی ملک میں مہاجرین اٹلی کے ذریعے داخل ہونے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انسانی حقوق پر کام کرنے والی تنظیموں اس بات کا معائنہ کر رہی ہیں کہ مہاجرین کی آمد کو روکنے کے لیے جو اقدامات کیے جا رہے کہیں وہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے زمرے میں تو نہیں آ رہے ہیں۔

سوئس حکام جرمنی کی جانب سے مہاجرین سے متعلق پالیسی میں سختی کی مثال دیتے ہوئے یومیہ قریب ایک ہزار مہاجرین کو اٹلی بھیجنے کے عمل کو جواز کے طور پر پیش کیا ہے۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے عمومی طور پر مہاجرین سے متعلق دوستانہ پالیسی کا دفاع کیا ہے، تاہم حالیہ کچھ عرصے میں یورپ بہ شمول جرمنی میں متعدد دہشت گردانہ واقعات کے بعد ان کی حکومت پر اس دباؤ میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے کہ مہاجرین کی بھرپور جانچ پڑتال کے بعد ہی ان کو ملک میں داخلے کی اجازت دی جائے۔