1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین کا بحران’’بال ترکی کے کورٹ میں‘‘

یورپی یونین میں مہاجرین سے متعلق مجوزہ سمجھوتے کے سلسلے میں اتفاقِ رائے ہو گیا ہے۔ یورپی سربراہان مملکت و حکومت آج جمعے کو یہ دستاویز ترک وزیر اعظم احمد داؤد اولُو کو پیش کر رہے ہیں۔

برسلز میں آج جمعے کو یورپی یونین اور ترکی کے مابین ایک خصوصی سربراہی اجلاس کے دوران ترک وزیر اعظم احمد داؤد اولُو کو یہ دستاویز پیش کی جائے گی، جس کے بعد اس مجوزہ سمجھوتے کو تسلیم کرنا یا نہ کرنا ان کے ہاتھ میں ہو گا۔ جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے مطابق اس طرح انسانی اسمگلروں کی سرگرمیوں کو روکا جا سکے گا۔ ان کے بقول، ’’اس بارے میں سب متفق ہیں کہ ہمیں اپنی تمام تر کوششیں کرتے ہوئے ترکی کے ساتھ ایک معاہدے کو ممکن بنانا ہے۔‘‘ میرکل نے مزید کہا کہ ماحول بہت مثبت ہے تاہم ان مذاکرات میں نتیجے تک پہنچنا آسان بھی نہیں ہو گا۔’’یورپی کونسل کے سربراہ ڈونلڈ ٹسک کو ہماری اس خواہش کا بخوبی علم ہے۔ یہ بھی واضح ہے کہ اس معاہدے کی راہ میں کچھ قانونی پیچیدگیاں بھی آ سکتی ہیں۔‘‘

اٹھائیس رکنی یورپی یونین کے سربراہان کے مابین ہونے والے اتفاق رائے کے مطابق یونان ترکی کو ایک محفوظ تیسرے ملک کے طور پر تسلیم کرے گا۔ اسی طرح ترکی کی ذمہ داری ہو گی کہ وہ یونان پہنچنے والے تمام پناہ گزینوں کو واپس لے گا۔ اس کے علاوہ واپس لیے جانے والے مہاجرین کوجنیوا معاہدے کے تحت تحفظ دیا جائے گا۔ اس دستاویز میں یہ بھی تحریر ہے کہ یورپی یونین سے واپس بھیجے جانے والے ہر شامی شہری کے بدلے میں ترکی سے براہِ راست ایک اور شامی شہری کو اپنے ہاں پناہ دینا بھی شامل ہے جبکہ یونان میں ہر مہاجر کو انفرادی سطح پر تیز رفتار عدالتی کارروائی کا حق حاصل ہو گا۔ اس کے علاوہ ترکی کو محفوظ تیسرا ملک قرار دے کر سیاسی پناہ کی تقریباً تمام درخواستیں رد کی جا سکتی ہیں۔

یورپی یونین کو امید ہے کہ اس طرح شامی پناہ گزینوں کی غیر قانونی طریقے سے یونان آنے کی حوصلہ شکنی کی جا سکے گی۔ یورپی یونین نے مہاجرین کے بہاؤ کو روکنے کے لیے ترکی کو تین ارب یورو کی پیشکش کی تھی، جسے ترکی نے دوگنا کرنے کا مطالبہ کر دیا تھا۔

دوسری جانب انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل پناہ گزينوں کے حوالے سے یورپی یونین اور ترکی کے مابین مجوزہ معاہدے کو غیر قانونی اور غیر اخلاقی قرار دے چکی ہے۔ مہاجرین کے بحران پر قابو پانے کے لیے ترکی اور یورپی یونین کے مابین مارچ کے اوائل میں بھی ایک خصوصی سربراہی اجلاس ہوا تھا، جو کسی نتیجے کے بغیر ہی اختتام پذیر ہو گیا تھا۔