1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرین سے ’ذلت آمیز‘ سلوک، چیک جمہوریہ تنقید کی زد میں

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے کمشنر زید رعد الحسین نے چیک جمہوریہ پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ مہاجرین کو ’ذلت آمیز حالات‘ میں نوّے دن کی حراست میں رکھ کر انسانی حقوق کی منظم پامالیوں کا مرتکب ہو رہا ہے۔

عالمی ادارے کے انسانی حقوق کے کمشنر رعد الحسین نے جمعرات کے روز کہا کہ مہاجرین اور تارکین وطن کی اپنے ملک میں آمد کو روکنے کی خاطر چیک حکومت کی طرف سے بنائی گئی پالیسی کا یہ ایک اہم حصہ معلوم ہوتا ہے کہ ان غیر ملکیوں کو شروع میں نوّے دن تک ’ذلت آمیز‘ حالات میں تحویل میں رکھا جائے۔

الحسین کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا کہ چیک جمہوریہ میں داخل ہونے والے ایسے افراد کی تلاشی بھی لی جا رہی ہے تاکہ ان سے برآمد ہونے والی رقوم سے ان کی تحویل پر اٹھنے والے اخراجات پورے کیے جا سکیں۔

الحسین نے چیک صدر میلوش زیمان کے ’اسلاموفوبیا‘ پر مبنی بیانات کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا۔ تاہم زیمان نے اقوام متحدہ کی طرف سے اس تنقید کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ پراگ حکومت اپنے موقف پر برقرار ہے۔ صدر زیمان کے ایک ترجمان کے مطابق، ’’صدر نے مسلم انتہا پسندی کے خطرات سے پہلے ہی متنبہ کر دیا تھا۔ وہ اپنے موقف پر قائم ہیں اور بین الاقوامی دباؤ کی وجہ سے حکومتی پالیسی میں تبدیلی نہیں کی جائے گی۔‘‘

یہ امر اہم ہے کہ اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین UNHCR نے کہہ رکھا ہے کہ ترکی سے طویل سفر کے بعد یونان پہنچنے والے زیادہ تر غیر ملکی شہری اقتصادی وجوہات کے باعث نقل مکانی نہیں کر رہے بلکہ وہ حقیقی مہاجرین ہیں اور اسی لیے پناہ کے مستحق ہیں۔ ان مہاجرین کا تعلق زیادہ تر شام سے ہے۔

چیک صدر زیمان نے اپنے ایک بیان میں خبردار کیا تھا کہ ’وہ (مہاجرین) اسلامی قوانین کا نفاذ چاہیں گے اور عورتوں کو زنا کے نام پر سنگسار کرنے جبکہ چوروں کے ہاتھ کاٹ دینے کی حمایت کریں گے۔‘‘ گزشتہ ہفتے ہی انہوں نے کہا تھا، ’’ہم خواتین کی خوبصورتی سے محروم ہو جائیں گے کیونکہ انہیں سر سے پاؤں تک برقعوں میں چھپا دیا جائے گا۔‘‘

چیک صدر زیمان کے انہی بیانات کی بازگشت ہنگری کے وزیر اعظم وکٹور اوربان کے لہجے میں بھی نظر آ رہی ہے، جنہوں نے کہا ہے کہ وہ اپنے ملک میں مسیحی روایات کے تحفظ کی خاطر مہاجرین کی آمد کی مخالفت کریں گے۔ اسی مقصد کے لیے ہنگری سربیا اور کروشیا سے متصل اپنی سرحدی گزرگاہوں کو بند بھی کر چکا ہے۔

Tschechien Milos Zeman Staatspräsident

چیک صدر زیمان نے اقوام متحدہ کی طرف سے اس تنقید کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ پراگ حکومت اپنے موقف پر برقرار ہے۔

تاہم اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے کمشنر زید رعد الحسین نے چیک حکومت کی پالیسیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ بین الاقوامی قوابین بہت واضح ہیں کہ مہاجرین کو تحویل میں لینا درپیش مسائل کے حل کے لیے آخری طریقہ کار ہونا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مہاجر ہونے کی بنا پر بچوں یا ان کے والدین کو حراست میں لینا بہتر طریقہ کار نہیں ہو سکتا اور یہ عمل قابل قبول بھی نہیں ہے۔

الحسین کے مطابق چیک جمہوریہ میں متعدد مہاجرین نے عدالتوں سے رابطہ کر کے آزادی بھی حاصل کی ہے لیکن زیادہ تر مہاجرین اپنے حقوق سے بے خبر ہیں جبکہ ملک میں داخل ہوتے ہی ان مہاجرین کے موبائل فونز اور دیگر سامان کو ضبط کر لیا جاتا ہے، اس لیے وہ کوئی مشاورت یا مدد حاصل کرنے کے قابل نہیں رہتے۔