1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرين پاليسی : اتحادی جماعتوں کے مابين بحث و مباحثے کا سبب

مہاجرين سے متعلق پاليسی کے حوالے سے جرمنی کی مخلوط حکومت ميں شامل اتحادی پارٹيوں کے مابين گزشتہ ہفتے دوبارہ گرما گرم بحث ہوئی، جس سبب ايک دہائی سے جرمن چانسلر کی ذمہ داری سنبھالنے والی ميرکل دباؤ کا شکار ہيں۔

مہاجرين کے ليے سہوليات کے موضوع پر جرمن حکومت ميں شامل قدامت پسندوں اور بائيں بازو کی جانب جھکاؤ والی جماعت سوشل ڈيموکريٹس (SPD) کے مابين گزشتہ ہفتے کے اختتام پر تازہ بحث و مباحثے اور اختلافات کے سبب آج پير کے روز ہونے والے کابينہ کی ايک خصوصی اجلاس کو معطّل کر ديا گيا۔ اس اجلاس ميں سياسی پناہ کے عمل ميں تيزی لانے کے ليے اقدامات پر اتفاق ہونا تھا۔

تاہم اس وقت سب سے بڑا تنازعہ ميرکل کی اپنی جماعت کرسچن ڈيموکريٹک يونين (CDU) اور صوبہ باويريا ميں اس کی اتحادی جماعت کرسچن سوشل يونين (CSU) کے مابين ہے۔ گزشتہ جمعے کے روز ميونخ ميں منعقدہ ايک کانفرنس ميں سی ايس يو کے سربراہ ہورسٹ زيہوفر نے انگيلا ميرکل پر شديد تنقيد کی۔ انہوں نے جرمنی آنے والے پناہ گزينوں کی حد مقرر نہ کرنے کے ليے چانسلر پر تنقيد کی، جس پر ان کی جماعت کے ديگر سياستدانوں نے بھی تائيد کرتے ہوئے انہيں بڑی داد دی۔ اس دوران ميرکل ان ہی کے ساتھ اسٹيج پر موجود تھيں۔

اس کے رد عمل ميں سی ڈی يو کے ايک سينئر رکن ايلمار بروک نے ہورسٹ زيہوفر پر جوابی تنقيد کرتے ہوئے ان کے رويے کو ’غير اخلاقی، غير ضروری اور ناقابل قبول‘ قرار ديا۔ بروک نے اس حوالے سے جرمن اخبار ’ٹاگس اشپيگل‘ ميں انٹرويو ديا۔ سی ڈی يو کے چند ديگر ليڈران کا بھی موقف ہے کہ سی ايس يو کے رہنما نے اتحادی جماعت کی ليڈر کے ساتھ نا مناسب رويہ اختيار کيا۔ دوسری جانب زيہوفر بھی اپنے موقف پر برقرار ہيں۔ جرمن ٹيلی وژن n-tv پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اتحادی جماعتوں ميں واقع اختلافات موجود ہيں اور وہ اس پر پردہ نہيں ڈال سکتے۔

جرمن چانسلر کے مشيروں نے انہيں تجويز دی ہے کہ انہيں اگلے موسم بہار ميں ہونے والے رياستی اليکشن سے قبل مہاجرين کی آمد کے سلسلے کو روکنے کے ليے اقدامات کرنا ہوں گے۔ يہ اليکشن 2017ء ميں ہونے والے اگلے وفاقی انتخابات سے قبل اہم آزمائش کی حيثيت رکھتے ہيں۔

ملتے جلتے مندرجات