1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

مہاجرت کے اقتصادی عوامل کا سدباب ضروری ہے، میرکل

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے کہا ہے کہ مہاجرت کے اقتصادی عوامل کے خاتمے کی خاطر افریقی ممالک میں نجی سرمایہ کاری کے حالات کو بہتر بنانا ہو گا۔ وہ اتوار سے تین افریقی ممالک کا دورہ شروع کر رہی ہیں۔

خبر رساں ادارے ڈی پی اے نے جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے حوالے سے آٹھ اکتوبر بروز ہفتہ بتایا ہے کہ افریقی ممالک کی اقتصادی صورتحال بہتر بنانے کے باعث اس براعظم سے مہاجرت اختیار کرنے والے باشندوں کی تعداد میں کمی واقع ہو گی۔ انہوں نے زور دیا ہے کہ مہاجرت کے اسباب کا سدباب کرنے کے لیے خصوصی اقدامات ناگزیر ہیں، جن میں اقتصادی خوشحالی ایک اہم ستون ثابت ہو گا۔

معاشی بنیادوں پر ہجرت کرنے والوں پر مزید سختی
سینیگال سے یورپ کا سفر: اقتصادی مہاجرین کی تعداد میں اضافہ
نئے مسائل کے لیے نئی حکمت عملی

دوسری عالمی جنگ کے بعد یورپ کو اس وقت مہاجرین کے شدید ترین بحران کا سامنا ہے۔ مشرقی وسطیٰ اور ایشیائی ممالک کے علاوہ براعظم افریقہ سے بھی مہاجرین کی ایک بڑی تعداد یورپ کا رخ کر رہی ہے۔ یورپی رہنما اس بحران پر قابو پانے کی کوشش میں ہیں لیکن مختلف یورپی ریاستوں میں اختلافات کے باعث یہ بحران ابھی تک حل نہیں ہو سکا ہے۔

انگیلا میرکل نے اپنے تین روزہ دورہ افریقہ سے قبل اپنے ہفتہ وار پوڈکاسٹ بیان میں کہا، ’’ایک پورے براعظم کی ترقی کے لیے کسی ایک ریاست کی مدد کافی نہیں ہو گی۔‘‘ انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ متحد ہو کر افریقی ممالک کی مدد کریں تاکہ وہاں ترقی ممکن ہو سکے۔

میرکل اس دورے کے دوران مالی، نائجر اور ایتھوپیا جائیں گی۔ اس دورے کے آغاز سے قبل انہوں نے کہا کہ افریقی ممالک کی اقتصادی صورتحال بہتر بنانے کے لیے ضروری ہے کہ وہاں نجی سرمایاکاری کو نہ صرف تحفظ فراہم کیا جائے بلکہ اسے فروغ بھی دیا جائے۔

میرکل نے کہا کہ توقع ہے کہ آئندہ 35 برسوں میں افریقہ کی آبادی دوگنا ہو جائے گی اور اس صورتحال میں عالمی برداری کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اس براعظم کو ترقی کی راہوں پر استوار کرنے کی خاطر اپنی ذمہ داری نبھائیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس سلسلے میں افریقی ممالک کی حکومتوں کو بھی اچھے طرز حکمرانی سے اپنے عوام کو بہتر حالات فراہم کرنے کی کوشش کرنا چاہیے۔

Deutschland Berlin - Angela Merkel auf dem Unternehmertag BGA (picture-alliance/dpa/ M. Gambarini)

جرمن چانسلر انگیلا میرکل اتوار سے تین افریقی ممالک کا دورہ شروع کر رہی ہیں۔

جرمنی کے ڈویلپمنٹ منسٹر گیرڈ ملر نے بھی روئٹرز سے گفتگو میں کہا ہے، ’’اگر ہم نے ابھی سے افریقہ کی اقتصادی صورتحال بہتر بنانے کی کوشش شروع نہ کی تو آئندہ کچھ برسوں میں مہاجرین کے بحران میں شدت آ جائے گی۔‘‘ انہوں نے اصرار کیا ہے کہ افریقہ کے لیے ایک مارشل پلان کی ضرورت ہے۔ میرکل کے مشیر نے یہ بھی کہا کہ اس تناظر میں برلن حکومت چین سمیت دیگر ممالک کے ساتھ مل کر افریقہ میں مختلف اقتصادی منصوبہ جات شروع کرنے کو تیار ہے۔

DW.COM