1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

مکاؤ آج بھی دنیا میں جوئے کی سب سے بڑی منڈی

پرتگال کی سابقہ نو آبادی مکاؤ میں حکومت نے اعلان کیا ہے کہ سن دو ہزار دس کے دوران اس علاقے میں قمار بازی کی صنعت کو ہونے والی آمدنی میں پچاس فیصد سے بھی زیادہ کا اضافہ دیکھنے میں آیا۔

default

مکاؤ کا ایم جی ایم گرینڈ کیسینو

ہانگ کانگ سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق اس طرح مکاؤ کی اس حیثیت کو اور بھی استحکام ملا ہے جس کے تحت وہ دنیا میں جوئے کی سب سے بڑی منڈی ہے۔

مکاؤ کی حکومت کی طرف سے پیر کے روز ایک سرکاری ویب سائٹ پر جاری کیے جانے والے اعداد و شمار کے مطابق سن دو ہزار دس میں اس خطے کو جوئے کی صنعت سے ہونے والی آمدنی کی مجموعی مالیت 188.34 بلین پاتاکا رہی جو 23.52 بلین امریکی ڈالر بنتی ہے۔

Casino in Macao

مکاؤ کے لزبن کیسینو کا اندرونی منظر

اس طرح سن دو ہزار نو کے مقابلے میں مکاؤ میں کیسینو انڈسٹری کو گزشتہ برس قریب 57.8 فیصد زیادہ آمدنی ہوئی ہے۔ سن دوہزار نو میں اس صنعت کو ہونے والی آمدنی کی مجموعی مالیت 119.37 بلین پاتاکا رہی تھی۔

مکاؤ کی معیشت میں گزشتہ قریب دس سال کے دوران اس وقت سے زیادہ ترقی دیکھنے میں آئی ہے، جب وہاں قمار بازی کی صنعت پر ریاستی اجارہ داری ختم کر دی گئی تھی۔ اس وقت قریب ایک عشرے قبل مکاؤ میں غیر ملکی کیسینو کمپنیوں کو بھی یہ اجازت دے دی گئی تھی کہ وہ وہاں اپنے قمار خانے قائم کر سکتی تھیں۔

Anushka Sharma

مکاؤ میں انڈین فلم اکیڈمی ایوارڈز کی ایک تقریب میں شریک بالی وڈ کی اداکارہ انوشکا شرما

مکاؤ پرتگال کی سابقہ نو آبادی ہے، جو چین کے جنوبی ساحل پر واقع ہے اور اب دنیا بھر میں قمار بازی کے حوالے سے سب سے زیادہ فائدہ مند اور پر کشش صنعت بن چکی ہے۔ مکاؤ اب چینی ریاست ہی کا حصہ ہے اور وہ پورے چین میں ایسی واحد جگہ ہے،جہاں قمار بازی قانونی طور پر ممنوع نہیں ہے۔

مکاؤ میں قمار بازی کی صنعت کو ہونے والے بے تحاشا فائدےکا سبب زیادہ تر ایسے چینی شہری بنتے ہیں، جو اپنی بڑی بڑی رقوم لے کر چین کے دوسرے حصوں سے جواء کھیلنے کے لیے مکاؤ کے قمار خانوں کا رخ کرتے ہیں۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس