1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

موغادیشو حملہ، ہلاکتیں 300 ہو گئیں، عالمی برادری کی مذمت

صومالی دارالحکومت موغادیشو میں ٹرک بم حملے کے بعد تباہ ہونے والی عمارتوں کا ملبہ ہٹانے کا سلسلہ جاری ہے۔ ملبے میں سے مسلسل انسانی لاشیں نکل رہی ہیں۔ ہلاکتیں تین سو تک پہنچ گئی ہیں۔

افریقی ملک صومالیہ کے وزیر اطلاعات عبدالرحمٰن یاریسو نے بتایا ہے کہ ہفتہ چودہ اکتوبر کو کیے گئے ٹرک بم حملے میں ہلاکتوں کی تعداد بڑھ کر 300 تک پہنچ گئی ہے اور اس تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔ تباہ شدہ عمارتوں کا ملبہ ہٹانے کا سلسلے بدستور جاری ہے۔ وزیر کے مطابق اس حملے میں 300 سے زائد افراد زخمی بھی ہیں۔

موغادیشو میں خودکش ٹرک حملہ، 231 ہلاک

موغادیشو میں عسکریت پسندوں کا حملہ، کم از کم ڈیڑھ درجن ہلاک

الشباب کے حملے میں افریقی مشن کے پچاس فوجی ہلاک

ایتھوپیا کے فوجی صومالیہ میں داخل

دوسری جانب امریکا، برطانیہ، کینیڈا اور فرانس کے لیڈروں نے اس حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ امریکی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ واشنگٹن حکومت انسداد دہشت گردی کے لیے صومالی حکومت اور عوام کے ساتھ کھڑی ہے۔ اس بیان میں کہا گیا کہ امریکا اور اُس کے حلیف انسدادِ دہشت گردی کے خلاف کوششیں جاری رکھیں گے تا کہ امن و استحکام حاصل ہو سکے۔

فرانسیسی صدر ایمانویل ماکروں نے صومالیہ کے ساتھ اظہار یک جہتی کیا ہے۔ انہوں نے افریقی یونین کی طرف سے دہشت گرد گروہوں کے خلاف جاری کارروائیوں کی حمایت جاری رکھنے کا عزم بھی ظاہر کیا ہے۔ افریقی یونین کمیشن کے چیرمین موسٰی فکی محمد نے صومالی حکومت کو کہا ہے کہ وہ اس نازک وقت میں اتحاد و اتفاق کا مظاہرہ کرتے ہوئے معاشرتی تقسیم پر قابو پائے۔

Somalia Mogadischu Bombenanschlag (Reuters/F. Omar)

موغادیشو میں بارود سے بھرے ٹرک کا حملہ ہفتہ چودہ اکتوبر کو کیا گیا تھا

برطانیہ کے وزیر خارجہ بورس جانسن نے کہا کہ لندن حکومت اس حملے کی پرزور مذمت کرتے ہوئے اٍس کو ایک بزدلانہ فعل قرار دیتی ہے۔ اُدھر کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو کا کہنا ہے کہ صومالیہ میں ہونے والا حملہ انتہائی خوفناک ہے اور کینیڈا اِس کی مذمت کرتا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 01:06

موغادیشو میں تباہ کن حملہ

اسی طرح ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن کے ترجمان کا کہنا ہے کہ حملے میں زخمی افراد کے لیے انقرہ حکومت ادویات روانہ کر رہی ہے۔ انہوں نے صومالی حکومت کو پیشکش کی ہے کہ وہ اپنے شدید زخمیوں کو ترکی منتقل کر دے تا کہ اُن کا علاج کیا جا سکے۔

چودہ اکتوبر کے حملے کی ذمہ داری ابھی تک کسی گروپ نے قبول نہیں کی ہے، لیکن ماضی میں ایسے حملے القاعدہ سے وابستگی رکھنے والا گروپ الشباب کرتا رہا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 01:06

موغادیشو پھر لرز اٹھا

DW.COM

Audios and videos on the topic