1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مودی کی اوباما سے ملاقات

امریکی صدر باراک اوباما نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی سے ملاقات کی ہے۔ دنیا کی ان دو بڑی جمہوریتوں کے رہنما دنوں ممالک کے درمیان تعلقات کے فروغ کے خواہاں ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق نریندر مودی جب امریکی صدر باراک اوباما سے ملاقات کے لیے وائٹ ہاؤس کے مغربی حصے میں پہنچے تو ان کا شاندار استقبال کیا گیا اور ان کی آمد پر انہیں گارڈ آف آنر پیش کیا گیا۔ وائٹ ہاؤس کے مطابق بات چیت میں موسمیاتی تبدیلیوں، قابل تجدید توانائی، سکیورٹی اور دفاعی تعاون اور معاشی بہتری جیسے موضوعات شامل ہیں۔

نریندر مودی کا دو برس قبل بھارت کا وزیراعظم بننے کے بعد امریکا کا یہ چوتھا دورہ ہے جبکہ باراک اوباما سے یہ ان کی ساتویں ملاقات ہے۔ وہ بدھ آٹھ جون کو امریکی کانگریس کے مشترکہ اجلاس سے خطاب بھی کریں گے۔

مودی کے موجودہ دورہ امریکا کا آغاز پیر سات جون کو ہوا تھا۔ انہوں نے ایک تقریب کے دوران اٹارنی جنرل لوریٹا لِنچ سے بھی ملاقات کی تھی۔ اس تقریب میں بھارت سے چوری شدہ دو سو سے زائد نوادرات کی بھارتی حکومت کو واپسی کا بھی اعلان کیا گیا تھا۔

مودی نے پیر کے روز امریکی اٹارنی جنرل لوریٹا لِنچ سے بھی ملاقات کی تھی

مودی نے پیر کے روز امریکی اٹارنی جنرل لوریٹا لِنچ سے بھی ملاقات کی تھی

اے ایف پی کے مطابق امریکی صدر باراک اوباما اور بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے ذاتی تعلقات میں بھی گرمجوشی بڑھ رہی ہے۔ گزشتہ برس جب باراک اوباما بھارت کے دورے پر پہنچے تھے تو انہوں نے مودی سے گلے مل کر گرمجوشی کا اظہار کیا اور دونوں رہنماؤں نے عوامی طور پر ایک دوسرے کی تعریفیں کیں۔

مودی پانچ ملکی دورے پر ہیں اور واشنگٹن پہنچنے سے قبل انہوں نے سوئٹزرلینڈ، افغانستان اور قطر کا بھی دورہ کیا ہے۔ امریکا کے بعد وہ میکسیکو جائیں گے۔ واشنگٹن میں وہ کانگریس کے اعلیٰ ارکان اور کاروباری رہنماؤں سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔

امریکا اور بھارت کی باہمی تجارت کا حجم 2008ء کے بعد سے مسلسل بڑھ رہا ہے جب دونوں ممالک کے درمیان ایک تجارتی معاہدہ ہوا تھا۔ 2009ء کے دوران باہمی تجارت کا حجم 60 بلین امریکی ڈالرز تھا جو 2015ء میں بڑھ کر 107 بلین ڈالرز تک پہنچ گیا۔ امریکا بھارت کو ملٹری ہارڈ ویئر فراہم کرنے والا ایک بڑا ملک بن گیا ہے۔