1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مودی کا دورہء جرمنی: یورپ سے آزاد تجارتی معاہدہ بھی ایجنڈے پر

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی اگلے ہفتے جرمنی کا جو دورہ کر رہے ہیں، اس کے ایجنڈے میں نئی دہلی کا یورپی یونین کے ساتھ ممکنہ آزاد تجارتی معاہدہ بھی شامل ہے۔ یہ دورہ جرمن بھارتی حکومتی مشاورت کے سلسلے کی ایک کڑی ہے۔

اس بارے میں ڈوئچے ویلے کے سری نیواس مازُومدارُو نے اپنی ایک تفصیلی رپورٹ میں لکھا ہے کہ اس دورے کے دوران مودی کی کوشش ہو گی کہ وہ جرمنی اور دیگر یورپی ملکوں کے رہنماؤں کے ساتھ اپنی بات چیت میں یورپی کاروباری اداروں کو اس امر کا قائل کر سکیں کہ بھارت غیر ملکی سرمایہ کاری کے لیے ایک اچھی منزل ہے اور خاص طور پر جرمن کاروباری اداروں کو زیادہ بڑی تعداد میں بھارت کا رخ کرنا چاہیے۔

اپنے اس چار ملکی یورپی دورے کے لیے نریندر مودی نئی دہلی سے پیر انتیس مئی کو روانہ ہوں گے اور اس دوران وہ جرمنی کے علاوہ فرانس، اسپین اور نئی دہلی کے ایک اہم اسٹریٹیجک پارٹنر ملک روس بھی جائیں گے۔ جرمنی میں دو روزہ قیام کے دوران مودی کے ساتھ ان کی کابینہ کے کئی وزراء بھی ہوں گے اور بہت سے بڑے بھارتی کاروباری اداروں کی سرکردہ شخصیات بھی۔

جرمن چانسلر بھارت میں انسانی حقوق کے لیے کھڑی ہوں، پیپلز واچ

بھارتی وزیر اعظم مودی کا دورہ جرمنی

جرمن اور بھارتی ذرائع کے مطابق نریندر مودی اور جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی ملاقات آئندہ منگل کے روز ہو گی اور اس دوران گفتگو کے اہم ترین موضوعات دوطرفہ تجارت اور سرمایہ کاری ہوں گے۔

تجارتی شعبے میں وزیر اعظم مودی کی کوشش یہ ہو گی کہ وہ اس حوالے سے جرمن سربراہ حکومت کی حمایت حاصل کر سکیں کہ بھارت اور یورپی یونین کے مابین ممکنہ آزاد تجارتی معاہدہ جلد از جلد طے پا جانا چاہیے۔

Indien Angela Merkel und Narendra Modi in Neu-Delhi (Reuters/A. Abidi)

نریندر مودی اکتوبر دو ہزار پندرہ میں نئی دہلی میں جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے ساتھ

مودی کے جرمنی اور دیگر یورپی ملکوں کے اس دورے کے بارے میں بھارتی حکومت میں انسانی وسائل کی ترقی کے نگران وزیر پرکاش جوادیکر نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ’’مودی حکومت کی توجہ کا محور ملک کی ترقی ہے۔ اب جب کہ مودی ایک حکومتی وفد کے ساتھ جرمنی جا رہے ہیں، تو آپ دیکھیں گے کہ اس دوران ہونے والی بات چیت کتنی مفید رہتی ہے۔ نئی دہلی اور برلن کے مابین اس وقت بھرپور تعاون جاری ہے۔‘‘

اس دورے کے دوران جو دیگر اہم موضوعات زیر بحث آ سکتے ہیں، وہ دفاعی شعبے میں تعاون، دہشت گردی کے خلاف جنگ میں مشترکہ کوششیں اور جرمن اور ہندی زبانوں کو ایک دوسرے کے ملکوں میں مزید ترقی دینے کی کوششیں ہیں۔

ترک صدر ایردوآن بھارت کے دورے پر

نوسالہ بھارتی لڑکی نے مودی حکومت پر مقدمہ کر دیا

ٹیررازم نہیں ٹُورازم، کشمیری نوجوانوں کو مودی کا نیا پیغام

نریندر مودی چانسلر میرکل کے ساتھ اپنی بات چیت کے بعد اسی روز دونوں ملکوں کے سرکردہ کاروباری رہنماؤں کے ایک اجلاس سے خطاب بھی کریں گے، جس دوران ان کا زور اس بات پر ہو گا کہ بھارت ایک تیزی سے ترقی کرتی ہوئی معیشت ہے اور جرمن اداروں کو بھارت میں زیادہ سے زیادہ سرمایہ کاری کرنا چاہیے۔

Deutschland Narendra Modi und Angela Merkel auf der Hannover Messe (Reuters/W. Rattay)

نریندر مودی کی ’میک اِن انڈیا‘ مہم کے لیے بھارت میں زیادہ غیر ملکی سرمایہ کاری بہت ضروری ہے

بھارتی وزیر اعظم کے لیے یہ بات اس لیے بھی ضروری ہے کہ وہ اقتصادی طور پر اپنی ’بھارت میں تیار کرو‘ کی مہم بھی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ اس مہم کے تحت زیادہ سے زیادہ غیر ملکی اداروں کو دعوت دی جاتی ہے کہ وہ بھارت میں سرمایہ کاری کرتے ہوئے مقامی منڈی کے لیے اپنی مصنوعات وہیں تیار کریں۔ اس پس منظر میں مودی کی ’میک اِن انڈیا‘ مہم کے لیے بھارت میں غیر ملکی سرمایہ کاری اور بھی ضروری ہے۔

جہاں تک دونوں ملکوں کے مابین تجارتی اور کاروباری روابط کا تعلق ہے تو جرمنی یورپی یونین میں بھارت کا اہم ترین تجارتی ساتھی ملک ہے۔ 2016ء میں دونوں ملکوں کے مابین مصنوعات اور خدمات کے شعبوں میں تبادلے کا مجموعی حجم 17.42 بلین یورو یا 19.4 بلین امریکی ڈالر کے برابر رہا تھا۔

اس کے علاوہ بھارتی اقتصادی منڈی میں اس وقت قریب 1800 جرمن کمپنیاں بھی اپنی کاروباری سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہیں اور یہ تعداد اس لیے بھی بڑھتی جا رہی ہے کہ کئی مغربی اداروں کے مطابق اس جنوبی ایشیائی ملک میں سرمایہ کاری اور کاروبار کے امکانات کافی حوصلہ افزا ہیں۔

اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ بھارتی معیشت میں ترقی کی سالانہ شرح چھ سے لے کر سات فیصد تک بنتی ہے اور یہ سالانہ اقتصادی ترقی کی وہ شرح ہے، جو یورپ اور شمالی امریکا کی زیادہ ترقی یافتہ معیشتوں کے مقابلے میں بھی کہیں زیادہ ہے۔

DW.COM