1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مودی اور ٹرمپ کی ملاقات: توقعات کيا اور امکانات کيا؟

بھارتی وزير اعظم نريندر مودی آج پير کے روز امريکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کر رہے ہيں۔ دونوں رہنما اس پہلی سرکاری ملاقات ميں باہمی روابط بہتر بنانے اور بالخصوص دفاع کے شعبے ميں تعاون بڑھانے پر زور ديں گے۔

DW.COM

وائٹ ہاؤس ميں آج  ہونے والی اس ملاقات ميں دفاعی شعبے ميں تعاون کو اولين ترجيح  حاصل ہوگی۔ مودی اور ٹرمپ کی بات چيت سے قبل ايک سينیئر امريکی اہلکار نے بتايا، ’’امريکا بھارتی شعبہ دفاع ميں جدت لانے اور اس رياست کو ايشيا پيسيفک خطے ميں ايک ليڈر کے طور پر مزيد مستحکم بنانے ميں دلچسچی رکھتا ہے۔‘‘ اس اہلکار کے بقول ’مضبوط بھارت، امريکا کے مفاد ميں ہے۔‘ وائٹ ہاؤس کی جانب سے ممکنہ دفاعی معاہدوں اور ڈيلز کے بارے ميں گرچہ براہ راست کوئی معلومات فراہم نہيں کی گئيں تاہم واضح طور پر يہ ضرور کہا گيا ہے کہ بھارت کو دفاع کے شعبے ميں ايک اہم اتحادی ملک کی حيثيت حاصل ہو سکے گی۔ ذرائع ابلاغ پر نشر کردہ رپورٹوں کے مطابق بھارتی بحريہ کو بائيس بغير پائلٹ والے ڈرون طياروں کی فروخت کے بارے ميں آج اعلان متوقع  ہے۔

علاوہ ازيں دونوں رہنما انسداد دہشت گردی، اقتصادی تعاون اور علاقائی امور پر تبادلہ خيال کريں گے۔ امريکی اہلکار کے مطابق انسداد دہشت گردی کے سلسلے ميں اضافی تعاون اور انٹيليجنس کا تبادلہ بھی اس ملاقات کے ايجنڈے ميں شامل ہے۔ اطلاعات  کے مطابق  تجارتی امور پر زيادہ متوازن تعلقات کا خواہاں ہونے کے ساتھ ساتھ امريکا ’انٹليکچوئل پراپرٹی رائٹس‘ کے سخت قوانين اور بھارت ميں کام کرنے والی امريکی کمپنيوں کے ليے ٹيکس کٹوتياں چاہتا ہے۔

بھارتی وزير اعظم اور امريکی صدر آج  متعدد ديگر محکموں سے تعلق رکھنے والی اہم شخصیات سے ملاقاتيں کريں گے اورآج  شام  وائٹ ہاؤس ميں ايک عشائيے کا اہتمام کيا گيا ہے۔ موجودہ ٹرمپ انتظاميہ کی طرف سے کسی بيرون ملک رہنما کے ليے رکھا جانے والا يہ پہلا عشائيہ ہے۔ ٹرمپ نے اپنی ايک ٹوئيٹ ميں مودی کو ’سچا دوست‘ قرار ديا ہے جبکہ مودی نے بھی لکھا کہ وہ ٹرمپ سے ملاقات کے منتظر ہيں۔

ويسے تو سابق امريکی صدر باراک اوباما کے دور ميں نئی دہلی اور واشنگٹن کے باہمی تعلقات کافی بہتر ہوئے تھے تاہم رواں سال جنوری ميں ٹرمپ کے عہدہ صدارت سنبھالنے کے بعد تجارت اور بھارتی شہريوں کے ليے امريکا ميں ملازمت کے ويزے جيسے معاملات پر اختلافات سامنے آنا شروع ہو گئے تھے۔ ٹرمپ نے ايک موقع پر يہ بھی کہہ ڈالا تھا کہ ماحولياتی و موسمياتی تبدليوں کے اثرات سے بچنے کے ليے پيرس معاہدے سے نئی دہلی در اصل مستفيد ہو رہا ہے۔ دہشت گردی جيسے اہم معاملے پر ٹرمپ انتظاميہ کی جانب سے يہ کہا جا چکا ہے کہ پاکستان کےخلاف سخت موقف اختيار کيا جا سکتا ہے۔ واضح رہے کہ بھارت پاکستان پر دہشت گردوں کو پناہ گاہيں فراہم کرنے کا الزام عائد کرتا ہے۔ جبکہ پاکستان ايسے الزمات مسترد کرتا آيا ہے۔