1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

موبائل کورٹس آرڈیننس واپس : وزیر اعظم گیلانی

پاکستانی وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے منگل کے روز موبائل عدالتوں سے متعلق صدارتی آرڈیننس واپس لینے کا اعلان کیا ہے۔

default

پاکستانی وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی

اسلام آباد میں قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران وزیر اعظم گیلانی نے کہا کہ اس آرڈیننس کو واپس لینے کا فیصلہ ایوان کے تقدس کو برقرار رکھنے کے لئے کیا گیا ہے۔ یوسف رضا گیلانی نے قومی اسمبلی سے اپنے مختصر خطاب میں کہا کہ وہ ایوان کے تقدس کو بحال رکھنے کے لئے آئین کے آرٹیکل 89 کے تحت صدر کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ یہ آرڈیننس واپس لے لیں۔ صدر آصف علی زرداری کی جانب سے اس آرڈیننس کا اعلان یکم مارچ کو کیا گیا تھا۔

پیپلز پارٹی کی حکومت کو ایوان کے اجلاس کے باوجود صدارتی آرڈیننس کے ذریعے موبائل عدالتوں کے قیام کے باعث شدید تنقید کا سامنا تھا۔ عمومی خیال ظاہر کیا جا رہا تھا کہ ان کورٹس کے قیام کا بنیادی مقصد وکلاء تحریک کی لانگ مارچ کیکال اور دھرنے میں اپوزیشن جماعتوں کی شمولیت کو روکنا تھا۔

موبائل کورٹس سے متلعق اس صدارتی آرڈینسس میں ضلعی مجسٹریٹوں کو سرسری سماعت کے بعد کسی بھی ملزم کوچھ ماہ تک کی قید کی سزا سنانے کا اختیار تجویز کیا گیا تھا۔ حکومتی موقف یہ تھا کہ اس آرڈیننس کا مقصد عوام کو فوری اور سستے انصاف کی فراہمی کو یقینی بنانا ہے۔ تاہم اپوزیشن جماعتوں کا خیال تھا کہ ایوان میں پیش کئے بغیر آرڈیننس کے ذریعے اس بل سے نہ صرف ایوان کی توہین ہوئی ہے بلکہ ایسا صرف اپوزیشن کی لانگ مارچ میں بھرپور شرکت کو روکنے کے لئے کیا گیا ہے۔

سیاسی مبصرین وزیر اعظم کی جانب سے موبائل کورٹس کے قیام کے آرڈیننس کے خاتمے کے اعلان کو حکومت اور نواز لیگ کے درمیان مفاہمت کی راہ ہموار کرنے کی کوشش کے تناظر میں دیکھ رہے ہیں۔

ایک ہفتہ قبل پاکستان میں حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت مسلم لیگ نواز کے سربراہ نواز شریف اور ان کے بھائی شہباز شریف کو جو اُس وقت وزیر اعلیٰ پنجاب تھے، سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کے ایک فیصلے کو برقرار رکھتے ہوئے نااہل قرار دے دیا تھا۔ اس کے بعد وفاقی حکومت نے پنجاب میں دو ماہ کے لئےگورنر راج کے نفاذ کا اعلان کر دیا تھا۔ عدالتی فیصلے کے بعد سے وفاقی حکومت اور نواز لیگ میں شدید تناؤ پایا جاتا ہے۔ نواز لیگ نے اپوزیشن کی چند دوسری جماعتوں کے ہمراہ وکلاء کے لانگ مارچ میں بھرپور شرکت کا اعلان کر رکھا ہے۔