1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

’منقسم قبرص کا اتحاد‘

ترک قبرص کے صدر محمد علی طلعت نے کہا ہے کہ گزشتہ 35 برس کے بعد پہلی مرتبہ منقسم قبرص کا اتحاد منزل کے قریب ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اتوار کے صدارتی انتخابات میں کامیاب نہ ہوئے تو مذاکراتی عمل ریت کی دیوار ثابت ہو گا۔

default

ترک اور یونانی قبرص کے صدور: فائل فوٹو

یہ مذاکراتی عمل اقوام متحدہ کی ثالثی میں جاری ہے۔ محمد علی طلعت کا یہ بھی کہنا ہے کہ یوں اب تک کی پیش رفت ضائع ہو سکتی ہے۔ دوسری جانب انتخابی عمل کے حوالے سے کئے جانے والے رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق محمد علی طلعت کو شکست ہو سکتی ہے۔ اُن کے حریف امیدوار درویش اروگلو کو برتری حاصل ہے۔ اروگلو اپنی انتخابی مہم میں ادغام کے بعد دونوں حصوں میں فرمانروائی کے مزید اختیارات رکھنے کےساتھ ساتھ دونوں حصوں کے شہریوں کی نقل مکانی کی بھی مخالفت کرتے ہیں۔ یونانی قبرص کے وزیر اعظم پہلے ہی ان شرائد کو ناقابل قبول قراردے چکے ہیں۔

Türkischer Premierminister Tayyip Erdogan

ترکی کے وزیر اعظم رجب طیب اردوغان

اُدھر اروگلو نے ایک بیان میں کہا کہ وہ کامیاب ہوئے تو مذاکراتی عمل برابری کی سطح پر جاری رکھیں گے۔

محمد علی طلعت کہتے ہیں کہ وہ اور یونانی قبرص کے صدر ڈیمٹرس کرسٹوفیاس بیشتر نکات پر متفق ہو چکے ہیں۔ اس پیش رفت کو اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے بھی سراہا ہے۔ اقوام متحدہ کی ثالثی میں ادغام کی بات چیت 2008ء سے جاری ہیں۔ طلعت کا ماننا ہے کہ بات چیت میں سست روی سے عوام اُن سے ناراض ہوئے ہیں۔ اُن کا کہنا ہے کہ مخالف امیدوار کی کامیابی سے مذاکرات رک جائیں گے اور ترک قبرص ایک مشکل دور میں داخل ہو جائے گا۔

دوسری جانب ترکی کے وزیر اعظم رجب طیب اردوغان آئندہ ماہ یونان کا دورہ کریں گے۔ اِس کا اعلان یونان نے کیا ہے۔ اس دورے میں فوجی تعلقات کے علاوہ قبرص کے اتحاد کے معاملے کو گفتگو کے ایجنڈے پر فوقیت حاصل رہے گی۔ 2007ء میں بھی ترک اور یونانی وزرائے اعظم ملاقات کر چکے ہیں۔

قبرص کے تنازعے کو ترکی کی یورپی یونین میں شمولیت کی راہ میں ایک بڑی رکاوٹ تصور کیا جاتا ہے۔ یونانی قبرص یورپی یونین کا رکن ملک ہے جبکہ ترک قبرص صرف ترکی ہی نے تسلیم کر رکھا ہے اور اُس کے 30 ہزار فوجی بھی وہاں موجود ہیں۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عابد حسین

DW.COM