1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ممکن ہے روس افغان طالبان کو ہتھیار دیتا رہا ہو، امریکی جنرل

افغانستان میں فوجی کارروائیوں کے نگران ایک اعلیٰ امریکی جنرل کے مطابق یہ ممکن ہے کہ روس افغان طالبان کو ہتھیار فراہم کرتا رہا ہو۔ جنرل جوزف ووٹل نے یہ بات واشنگٹن میں امریکی کانگریس کی ایک کمیٹی کو سماعت کے دوران بتائی۔

واشنگٹن سے جمعرات تیس مارچ کو ملنے والی نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق جنرل جوزف ووٹل امریکی مسلح افواج کی سینٹرل کمانڈ کے سربراہ ہیں، جن کی پیشہ ورانہ ذمے داریوں میں اس امر کی نگرانی کرنا بھی شامل ہے کہ واشنگٹن کے فوجی دستے افغانستان میں کب کیسی کارروائیاں کر رہے ہیں۔

جنرل ووٹل نے بدھ انتیس مارچ کی شام امریکی کانگریس کی ایک کمیٹی کو ایک سماعت کے دوران بتایا کہ یہ عین ممکن ہے کہ ماسکو افغانستان میں طالبان عسکریت پسندوں کو اسلحہ فراہم کرتا رہا ہو۔

افغانستان میں ڈرون حملے میں القاعدہ کا اہم کمانڈر ہلاک، پینٹاگون

افغان طالبان کی پاکستان آمد، داعش کے خلاف حکمت عملی؟

پاکستانی حکام کی افغان طالبان لیڈروں کے ساتھ ملاقات

یو ایس سینٹرل کمانڈ کے سربراہ کا کہنا تھا، ’’روس یہ کوششیں کرتا رہا ہے کہ وہ افغانستان میں ایک بااثر تیسرا فریق بن جائے۔‘‘ جنرل ووٹل نے کانگریس کو بتایا، ’’میری رائے میں یہ سمجھنا بجا ہے کہ روس ممکنہ طور پر افغان طالبان کی ہتھیاروں کی فراہمی یا دیگر اشیاء کی شکل میں کسی نہ کسی قسم کی تائید و حمایت کرتا رہا ہو۔‘‘

US-General Joseph Votel (picture alliance/ZUMA Press/Y. Bogu)

جنرل جوزف ووٹل

اس امریکی جنرل کے ان اندازوں کے پس منظر میں ڈی پی اے نے یہ بھی لکھا ہے کہ روس نے گزشتہ ماہ فروری میں اپنے ہاں افغانستان کی صورت حال سے متعلق ایسے مذاکرات کا اہتمام کیا تھا، جن میں مغربی ملکوں کو شامل کرنے کی کوشش ہی نہیں کی گئی تھی۔

اسی طرح کی ایک اور کانفرنس چودہ اپریل کو روس ہی میں ہو گی جس میں شرکت کے لیے مغربی دنیا سے اب صرف امریکا کو دعوت دی گئی ہے لیکن جس میں ممکنہ طور پر افغان طالبان حصہ نہیں لیں گے۔

افغانستان میں نیٹو کی قیادت میں بین الاقوامی جنگی دستے 2014ء کے اختتام پر وہاں سے باقاعدہ طور پر رخصت ہو گئے تھے، جس کے بعد سے ہندو کش کی اس ریاست میں سلامتی کی صورت حال واضح طور پر خراب ہوئی ہے اور افغان طالبان مسلسل بڑا ہوتا ہوا خطرہ بن چکے ہیں۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات