1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ممتاز قادری کا سزائے موت کے خلاف اپیل نہ کرنے کا فیصلہ

گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قاتل سابقہ پولیس اہلکار ممتاز قادری کو دو بار سزائے موت اور دو لاکھ روپے بطور معاوضہ ادا کرنے کی سزا سنائی گئی ہے۔ مجرم اور اسکے اہل خانہ نے عدالتی فیصلے کے خلاف اپیل نہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

سلمان تاثیر کا قاتل ممتاز قادری

سلمان تاثیر کا قاتل ممتاز قادری

راولپنڈی کی انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت کے جج پرویز علی شاہ نے انتہائی سخت سیکورٹی والی اڈیالہ جیل میں اس مقدمے کا فیصلہ سنایا۔ ہفتے کے روز سنائے گئے 12 صفحات پر مشتمل تحریری فیصلے میں عدالت نے کہا ہے کہ کسی فرد واحد کو اختیار نہیں دیا جا سکتا کہ وہ یہ فیصلہ کرے کہ کون مرتد اور غیر مسلم ہے اور نہ ہی کسی فرد کو یہ اجازت دی جا سکتی ہے کہ وہ لوگوں کو سزا دے کیونکہ اس سے معاشرے میں انارکی کا راستہ ہموار ہوگا۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں یہ بھی کہا ہے کہ ملزم کے اقدام نے عام لوگوں میں خوف و ہراس پیدا کیا جو دہشتگردی کے زمرے میں آتا ہے اس لیے ملزم کو انسداد دہشتگردی ایکٹ کی دفعہ 7 اور تعزیرات پاکستان کی دفعہ 302 کے تحت سزائے موت دی جاتی ہے۔

ممتاز قادری کے حق میں پاکستان کی متعدد مذہبی جماعتوں کی طرف سے مظاہرے کیے جاتے رہے ہیں

ممتاز قادری کے حق میں پاکستان کی متعدد مذہبی جماعتوں کی طرف سے مظاہرے کیے جاتے رہے ہیں

عدالتی فیصلہ آنے کے بعد ملزم کے سینکڑوں حامیوں نے اڈیالہ جیل کے باہر جج، عدالت اور حکومت کے خلاف زبردست نعرے بازی کی۔ مظاہرین نے ٹائر جلا کر راولپنڈی کی مصروف ترین مری روڈ کو بھی چند گھنٹوں کے لیے بند رکھا ۔ مشتعل ہجوم نے راولپنڈی کے اس مقام پر بھی توڑ پھوڑ کی جو سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کے قتل کے بعد یادگار کے طور پر قائم کیا گیا ہے۔

مجرم کے وکیل راجہ شجاع الرحمن کا کہنا ہے: ’’ممتاز قادری صاحب اور ان کے گھر والوں نے اپیل کرنے سے انکار کر دیا ہے لیکن ہماری پوری کوشش یہ ہے کہ ہم قانون پر یقین رکھنے والے لوگ ہیں۔ اگر قانون نے سلمان تاثیر کے خلاف اپنا ضابطہ مکمل نہ کیا تو ہم کم از کم ممتاز قادری کے ساتھ قانونی طور پر مکمل حمایت کا اعلان کرتے ہیں اور کوشش کریں گے کہ ان کے گھر والوں کو منا لیں۔‘‘

انہوں نے کہا کہ عدالت کا فیصلہ جانبدارانہ ہے۔ ہمیں بتایا گیا تھا کہ آج استغاثہ نے اپنے دلائل دینے ہیں لیکن پھر جج صاحب اچانک صبح تھوڑی دیر کے لیے جیل میں آئے اور یہ فیصلہ سنا کر چلے گئے۔

ممتاز قادری نے گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو چار جنوری کو اسلام آباد کی کوہسار مارکیٹ میں فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا

ممتاز قادری نے گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو چار جنوری کو اسلام آباد کی کوہسار مارکیٹ میں فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا

دوسری جانب انسانی حقوق کے کارکنوں نے عدالتی فیصلے کو سراہتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے معاشرے میں شدت پسندانہ رجحانات کی حوصلہ شکنی ہو گی۔ انسانی حقوق کمیشن کے سابق سربراہ ڈاکٹر مہدی حسن نے کہا: ’’انصاف کا تقاضا پورا کیا عدالت نے ۔۔۔۔ اور لوگوں کو یہ پیغام ملے گا کہ اس قسم کی حرکتیں کرنے کے بعد مجرمانہ سرگرمیوں کا حساب دینا پڑتا ہے اور اس کی سزا بھی بھگتنا پڑتی ہے۔ میں سمجھتا ہوں کے عدالت نے اچھی مثال قائم کی ہے۔‘‘

خیال رہے کہ پنجاب پولیس کی ایلیٹ فورس کے اہلکار ممتاز قادری نے گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو چار جنوری کو اسلام آباد کی کوہسار مارکیٹ میں فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا۔ جس کے بعد پولیس نے ملزم کو گرفتار کر کے چھ جنوری کو انسداد دہشتگردی کی عدالت میں پیش کیا اور پھر تقریباً آٹھ ماہ تک یہ مقدمے زیر سماعت رہا۔

انسداد دہشت گردی قانون کے تحت مجرم کے پاس عدالتی فیصلے کے خلاف ہائی کورٹ میں اپیل کرنے کے لیے سات دن کی مہلت ہے۔

رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: افسر اعوان

 

DW.COM

ویب لنکس