1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ممبئی حملے: پاکستانی اقدامات محض دکھاوا

بھارتی سکریٹری داخلہ نے 2008 ء میں ممبئی حملوں کے ذمہ داران کو گرفتار کر کے مقدمہ چلانے کی پاکستانی کوششوں کو محض ایک ’دکھاوا‘ قرار دیا ہے۔

default

امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل کو دئے گئے ایک انٹرویو میں بھارتی سیکرٹی داخلہ جی کے پلائی کا کہنا تھا کہ اس کی وجہ اسلام آباد حکام کا اس واقعے میں پاکستانی حکومت کے سینئر حکام کے ملوث ہونے کا خدشہ ہے۔

Reaktion Terror Bombay

ممبئی میں حملوں کے بعد پاکستان اور بھارت کے درمیان تعلقات میں تناوء برقرار ہے

ان کا مزید کہنا تھا کہ بھارت نے پاکستان کو حملے کی سازش میں ملوث افراد کی شناخت کے سلسلے میں کئی شواہد فراہم کئے ہیں اور ان میں سے چند معلومات ڈیوڈ ہیڈلی سے پوچھ گچھ کے دوران حاصل کی گئی تھیں۔ ڈیوڈ ہیڈلی پاکستانی نژاد امریکی شہری ہے، جو بھارت میں حملے کے لئے ممبئی کے ہوٹلوں اور دیگر اہداف کا معائنہ یا سروے کرنے کے جرم میں گرفتار ہے اور اس نے واقعے کا ذمہ دار پاکستان میں موجود عسکریت پسندوں کو قرار دیا تھا۔

پلائی کا کہنا ہے کہ ان کے خیال میں پاکستان اس معاملے میں کوئی قدم نہیں اٹھائے گا۔ وہ مزید کہتے ہیں کہ ’’پاکستان واقعے میں ملوث ملزمان کے خلاف کاروائی کرنے میں محتاط رویہ اختیار کئے ہوئے ہے کیونکہ اس کو ڈر ہے کہ اگر اس نے ایسا کیا تو عسکریت پسند واقعے میں پاکستانی حکومتی اہلکاروں کے ملوث ہونے کے حوالے سے حقائق سامنے لے آئیں گے‘‘۔

Zaki ur Rehman Lakhwi

ممبئی حملے کا منصوبہ ساز، ذکی الرحمان لکھوی

واضح رہے کہ 26 نومبر کو ممبئی میں 10مسلح عسکریت پسندوں نے حملہ کر دیا تھا۔ 60 گھنٹوں تک جاری خونریزی میں نو دہشت گردوں کے علاوہ 166 افراد ہلاک ہوئے تھے جبکہ اجمل قصاب نام کے ایک دہشت گرد کو گرفتار کر لیا گیا تھا، جسے مئی میں بھارتی عدالت کی جانب سے سزائے موت سنائی جا چکی ہے۔

دوسری جانب پاکستان نے اس واقعےمیں ملوث سات مشتبہ افراد کو منصوبے کے ماسڑ مائنڈ ذکی لکھوی سمیت گرفتار کر کے عدالت میں پیش کر دیا تھا تاہم ابھی تک کسی بھی ملزم پر فرد جرم عائد نہیں کی گئی ہے۔ پاکستان نے مطالبہ کیا تھا کہ اجمل قصاب کو پاکستان کے حوالے کیا جائے تاکہ مقدمے کو آگے بڑھایا جا سکے تاہم بھارت کی جانب سے اس مطالبے کے مسترد کئے جانے کے بعد سے پاکستان میں مقدمے کی کاررروائی تعطل کا شکار ہے، جس کو بھارت کی جانب سے محض ایک تاخیری حربہ قرار دیا جا رہا ہے۔

رپورٹ: عنبرین فاطمہ / خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM