1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ممبئی حملوں کے ذمہ دار جنگ چاہتے ہیں، حسین حقانی

امریکہ میں تعینات پاکستانی سفیر نے کہا ہے کہ دہشت گرد اسلام آباد اور نئی دہلی کے درمیان تعلقات بہتر ہوتے نہیں دیکھنا چاہتے۔ انہوں نے کہا کہ ممبئی حملےان انتہاپسندوں نے کروائے، جو دونوں ملکوں کے درمیان جنگ چاہتے ہیں۔

default

حسین حقانی نے یہ باتیں بوسٹن میں بھارتی خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہیں۔ وہ ’جنوبی ایشیا کا مستقبل’ کے موضوع پر ایک سیمینار سے خطاب کے بعد گفتگو کر رہے تھے۔ اس سیمینار کا اہتمام ہارورڈ یونیورسٹی کے ساؤتھ ایشیا انشی ایٹو نے کیا تھا۔

اس موقع پر حسین حقانی نے تسلیم کیا کہ پاکستان میں ممبئی حملوں کے مقدمے کی سماعت سست روی کا شکار ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کو خطے میں دہشت گردی کے خاتمے کے لیے مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان یا بھارت میں دہشت گردی کا شکار کوئی نہ ہو، اس بات کو یقینی بنانا ہو گا۔

حسین حقانی نے کہا، ’پاکستان میں موجود دہشت گرد یہ نہیں چاہتے کہ اسلام آباد اور نئی دہلی کے درمیان بہتر تعلقات قائم ہو سکیں۔ انتہا پسند چاہتے ہیں کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جنگ چھڑ جائے، یہی وجہ ہے کہ انہوں نے ممبئی حملوں کی منصوبہ بندی کی‘۔

پاکستانی سفیر نے کہا کہ سانحہ ممبئی کے متاثرین کو انصاف کی فراہمی کے لیے ان کی حکومت بھارت کے ساتھ تعاون کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا، ’ان حملوں کے پہلے دِن سے ہی ہم نے یہ کہا کہ ہم متاثرین کے ساتھ ہیں۔ ان حملوں کے ذمہ دار پاکستان میں پکڑے گئے یا ان کا کوئی بھی تعلق پاکستان سے نکلا تو انہیں قرار واقعی سزا دی جائے گی۔ جن لوگوں کی شناخت ہو چکی ہے اور جن کے خلاف مقدمہ چل رہا ہے، ان کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی‘۔

Flash-Galerie Anschläge Mumbai Indien 2008 Ajmal Kasab

ممبئی میں مختلف مقامات پر دہشت گردی کی کارروائیاں کی گئی تھیں

قبل ازیں سیمینار سے خطاب میں حسین حقانی نے کہا کہ ممبئی حملوں کے حوالے سے پاکستان کا ردِ عمل بہت واضح ہے اور وہاں اس مقدمے کی پیروی کی جا رہی ہے۔ تاہم انہوں نے کہا کہ یہ عمل سست روی کا شکار ہے۔ انہوں نے کہا، ’کچھ قوانین ہیں ، وکلائے صفائی کو کچھ فوائد حاصل ہیں، جن کی وجہ سے وہ مقدمے کو ملتوی کروانے میں کامیاب ہو رہے ہیں‘۔

انہوں نے دونوں ممالک کے باہمی تعلقات کو ایک شادی شدہ جوڑے کی ’بدترین طلاق‘ کے مترادف قرار دیا۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: امجد علی

DW.COM