1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مل کر کام کرنے کا عزم

آصف علی زرداری اور حامد کرزئی نے مشترکہ پریس کانفرنس میں دہشت گردی کے جنگ میں مل کر اقدامات اٹھانے کی ضرورت پر زور دیا۔

default

صدرآصف علی زرداری نے صدارت کے منصب پر بیھٹنے کہ فوراً بعد اپنی پہلی پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ عوام کو کشمیر کے حوالے سے جلد خوشخبری سننے کہ ملے گی ۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے مسلم لیگ ن کے قائد نوازشریف سے رابط کیا گیا ہے۔ زرداری نے کہا کہ ہم جلد از جلد کشمیر مسئلے کا حل چاہتے ہیں۔ صدر نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ و ہ پڑوسی ممالک سے اچھے تعلقات چاہتے ہیں۔


اس پریس کانفرنس سے زرداری کے ساتھ ساتھ افغان صدر حامد کرزئی نے بھی خطاب کیا۔ اپنے خطاب میں انہوں نے آصف علی زرداری کو اپنا بھائی قرار دیتے ہوئے پاکستان کو افغانستان کے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اورافغانستان ایک طرح کے مسئلوں کا سامنا ہے۔ کرزئی نے کہا کہ پاکستان اور افعانستان ہمیشہ سے ساتھ ساتھ رہے ہیں اور دونوں ممالک کو الگ نہیں کیا جا سکتا۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ انہوں نے اب تک جو بھی دہشت گردی کے حوالے سے جو بھی الزامات پاکستان پرعائد کئے ہیں وہ حقائق پر مبنی ہیں۔

گزشتہ دنوں کے دوران افغانستان پاکستان پر دہشت گردی کی پشت پناہی کرنے کہ الزامات عائد کرتا آیا ہے۔ اس کہ بعد یہ پہلا موقع تھا کہ جب دونوں ممالک کے سربراہاں کے مابین ملاقات خوشگوارماحول میں ہوئی ۔ دونوں سربراہ مملکت میں مکمل ہم خیالی اوراتفاق رائے نظر آیا۔ پریس کانفرنس کے دوران دونوں صدور نے اتحادی افواج کی کارروائیوں میں عام شہریوں کی ہلاکت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی صورت میں عام شہریوں کی ہلاکت کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔ آصف علی زرداری نے ججوں کی بحالی کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب واضع جواب نہیں دیئے۔