1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ملک بدری مہاجرین کے بحران کا واحد حل ہے، زیمان

چیک جمہوریہ کے صدر میلوش زیمان کا کہنا ہے کہ پناہ گزینوں کے موجودہ بحران کا واحد حل یہ ہے کہ معاشی بنیادوں پر ہجرت کرنے والوں اور شدت پسندی میں ملوث مشتبہ تارکین وطن کو ملک بدر کر دیا جائے۔

چیک جمہوریہ کے صدر میلوش زیمان اس سے قبل بھی بارہا مشرق وسطیٰ سے آنے والے مہاجرین اور تارکین وطن کے خلاف بیانات دیتے رہے ہیں۔ بائیں بازو کے نظریات رکھنے والے اکہتر سالہ زیمان گزشتہ برس انتہائی دائیں بازو کی تنظیموں کی جانب سے مہاجرین اور اسلام کے خلاف منعقدہ ایک ریلی میں بھی شریک ہو چکے ہیں۔

جرمنی میں پاکستانیوں کو سیاسی پناہ ملنے کے امکانات کتنے؟

مہاجرین کی ملک بدری میں تعاون کرو، ورنہ امداد بند

سلوواکیہ کے دارالحکومت براٹسلاوا میں منعقدہ سوشل ڈیموکریٹک پارٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے زیمان کا کہنا تھا، ’’یورپی یونین پناہ گزینوں کے بحران کو حل کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے۔‘‘

زیمان کے الفاظ میں اس بحران کا حل کچھ یوں ہے، ’’اس مسئلے کا واحد حل یہ ہے کہ اقتصادی بنیاد پر ہجرت کرنے والوں کو فی الفور ملک بدر کر دیا جائے۔ اس کے علاوہ مذہبی منافرت پھیلانے اور مذہبی بنیادوں پر تشدد کی تبلیغ کرنے والے یا مختصراﹰ دہشت گردی کے منصوبہ سازوں کو بھی ملک بدر کیا جائے۔‘‘

Tschechien Milos Zeman anti-islam Rede in Prag

میلوش زیمان اسلام مخالف ریلی میں شرکت کے دوران

چیک جمہوریہ کے سربراہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ وہ ان تمام غیر ملکیوں کا خیر مقدم کرنے کے لیے تیار ہیں جو سماجی انضمام پر یقین رکھتے ہیں۔ انہوں نے اپنے ایک پرانے بیان کو دہراتے ہوے کہا کہ مسلمان تارکین وطن مغربی معاشروں اور یورپی ثقافت میں ضم نہیں ہو سکتے۔

زیمان مسلمان تارکین وطن کے بارے میں اس سے پہلے بھی ایسے بیانات دیتے رہے ہیں جس کے بعد انہیں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے کمشنر زید رعد الحسین سمیت کئی حلقوں کی جانب سے تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ اس بارے میں بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا، ’’سیاسی طور پر درست بات کرنا جھوٹ بولنے کے مترادف ہے۔‘‘

اس سے قبل زیمان نے ایک اور متنازعہ بیان میں کہا تھا کہ بڑے تعداد میں مسلمان تارکین وطن کی یورپ آمد در اصل ایک ’منظم یلغار‘ ہے۔ انہوں نے شام سے آنے والے مہاجرین پر زور دیا تھا کہ وہ اپنے ملک واپس جا کر ’دولت اسلامیہ‘ کے خلاف لڑائی میں شامل ہوں۔

میلوش زیمان چیک جمہوریہ کے پہلے ایسے صدر ہیں، جن کا انتخاب بلاواسطہ انتخابات کے ذریعے ہوا تھا۔ وہ 2013ء سے اقتدار میں ہیں۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ تارکین وطن ’یہ جانتے ہوئے بھی کہ ان بچوں کے ڈوب جانے کا اندیشہ ہے، انہیں ربڑ کی کشتیوں کے ذریعے لے کر آتے ہیں۔‘‘

DW.COM