1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’ملا عمر کا کراچی میں علاج،‘ پاکستانی فوج کی تردید

پاکستانی فوج نے امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ میں شائع ہونے والی اس رپورٹ کی تردید کی ہے کہ افغانستان میں طالبان کے روپوش رہنما ملا عمر کا دل کے عارضے میں مبتلا ہونے کی وجہ سے ابھی حال ہی میں کراچی میں علاج کیا گیا۔

default

ملا عمر کی 2003 میں شائع ہونے والی دو تصاویر

امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے یہ خبر شائع تو کردی لیکن پاکستانی فوج نے اس کی پر زور تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ دعویٰ بالکل غلط اور بے بنیاد ہے کہ افغان طالبان کے مفرور رہنما ملا محمد عمر کا کراچی میں کوئی علاج کیا گیا ہے۔

اسلام آباد میں پاکستانی فوج کی طرف سے جمعرات کو جاری کردہ ایک بیان کے مطابق ذرائع ابلاغ میں شائع ہونے والی ایسی رپورٹیں من گھڑت ہیں اور ان کا مقصد محض مخصوص مفادات کا تحفظ ہے۔

اس بارے میں واشنگٹن پوسٹ نے اپنی ایک تازہ اشاعت میں دعویٰ کیا ہے کہ سن 2001 میں افغانستان پر امریکہ کی قیادت میں کیے جانے والے فوجی حملے کے بعد سے لاپتہ اور ابھی تک مسلح مزاحمت کرنے والے اسلام پسند افغان جنگجوؤں کے روحانی رہنما ملا عمر کو بظاہر سات جنوری کو دل کا ایک دورہ پرا تھا، جس کے بعد انہیں کراچی کے نواح میں ایک ہسپتال لے جایا گیا تھا۔

Flash-Galerie Taliban legen Waffen nieder

گزشتہ برس کئی طالبان نے اپنے ہتھیار کابل میں سرکاری حکام کے حوالے کر دیے تھے

اس اخبار نے ایک پرائیویٹ انٹیلی جنس نیٹ ورک کے حوالے سے لکھا کہ اس خبر کا ذریعہ مبینہ طور پر اس ہسپتال کا ایک ڈاکٹر تھا۔ یہ خبر جس خفیہ نیٹ ورک کا حوالہ دیتے ہوئے شائع کی گئی، وہ امریکہ کے سابقہ سکیورٹی اہلکاروں کی طرف سے چلایا جانے والا ایک ایسا نجی نیٹ ورک ہے، جو Eclipse Group کہلاتا ہے۔

اپنی اس رپورٹ میں واشنگٹن پوسٹ نے دعویٰ کیا کہ ملا عمر کو پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے ’آئی ایس آئی کی طرف سے فوری طور پر ہسپتال پہنچایا گیا، جہاں ان کا آپریشن کیا گیا، خون پتلا کرنے والی ادویات دی گئیں اور پھر چند روز بعد انہیں چھٹی دے کر دوبارہ آئی ایس آئی کے حوالے کر دیا گیا۔‘

USA Presse Washington Post Hauptquartier Logo

امریکی دارالحکومت میں واشنگٹن پوسٹ کی عمارت

پاکستان اگرچہ باضابطہ طور پر افغانستان میں طالبان کے خلاف مسلح کارروائیاں کرنے والے بین الاقوامی فوجی دستوں کا اتحادی ملک ہے تاہم امریکی حکام کی طرف سے آئی ایس آئی پر طویل عرصے سے یہ الزام بھی لگایا جاتا ہے کہ وہ افغانستان اور طالبان کے سلسلے میں مبینہ طور پر ’ڈبل گیم‘ کھیل رہی ہے۔

مغربی ذرائع کا کہنا ہے کہ انٹر سروسز انٹیلی جنس ایجنسی ابھی بھی ملا عمر کے بہت قریب ہے، جن کی اس نے 1996 سے لے کر 2001 تک اس وقت بھی حمایت کی تھی، جب وہ افغانستان میں برسراقتدار طالبان انتظامیہ کے سربراہ تھے۔

پاکستان ہمیشہ ہی سے طالبان کی درپردہ حمایت سے متعلق مغربی دعووں کی تردید کرتا آیا ہے اور واشنگٹن پوسٹ نے ملا عمر کے بارے میں اپنی رپورٹ میں امریکہ میں پاکستانی سفیر حسین حقانی کا یہ بیان بھی شائع کیا ہے کہ Eclipse گروپ نامی نجی نیٹ ورک کے دعوے قطعی بے بنیاد ہیں۔

اسی بارے میں افغانستان میں طالبان عسکریت پسندوں کے ایک ترجمان نے بھی خبر ایجنسی اے ایف پی کے ساتھ رابطہ کر کے یہ کہا کہ یہ رپورٹ دشمنوں کی پھیلائی ہوئی افواہ ہے اور ’ملا عمر بالکل خیریت سے اور صحت مند ہیں۔‘

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس