1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ملائیشیا میں خواتین کے لیے خصوصی بسیں

ملایئشیا نے حال ہی میں ایسی بسیں متعارف کروائی ہیں جس میں صرف خواتین سفر کر سکیں گی۔ ان بسوں کو متعارف کروانے کا مقصد خواتین کوبسوں میں جنسی طور پر ہراساں کرنے کے واقعات پر قابو پانا ہے۔

default

مسلم اکثریت والے ملک ملائیشیا میں اس سے قبل ملائیشین ریلوے کی جانب سے رواں برس خواتین مسافروں کے لئے ٹرینوں میں گلابی رنگ کے خصوصی ڈبے متعارف کروائے گئے تھے، تاکہ اُنہیں مردوں سے علیحدہ سفر کرنے کی سہولت حاصل ہو سکے۔ اسی تجربے کی مقبولیت کے بعد یہ فیصلہ کیا گیا کہ خواتین کے لئے بسوں کے سفر کوسہل بنایا جائے ۔

Modewoche in Kuala Lumpur - Calvin Thoo frauen mit Kopftuch Symbolbild

مسلم اکثریتی ملک ملائیشیا ،خواتین کو مردوں سے علیحدہ سہولیات فراہم کرنے میں دلچسپی لے رہا ہے

خواتین کو یہ سہولت فراہم کرنے والی سرکاری بس کمپنی RapidKL نے یہ بسیں ملائیشیا کے دارالحکومت کے سات مختلف روٹس پر مصروف اوقاتِ کار کے دوران چلانی شروع کی ہیں۔ اس بس کمپنی کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر محمد حسین کا کہنا ہے کہ ان بسوں کو چلانے کا فیصلہ خواتین مسافروں کی طرف سے شکایات کے مدنظر کیا گیا جس میں انہوں نے پیک آورز یا مصروف اوقاتِ کار میں مردوں کے ساتھ سفر کرنے کے تجربے کو پریشان کن قرار دیا تھا۔ تاہم اس کمپنی نے یہ نہیں بتایا کہ آیا خواتین نے مردوں کی جانب سے جنسی طور ہر ہراساں کئے جانے کی شکایات بھی کی تھیں یا نہیں۔

ان تجربات کی کامیابی کے بعد اب ملائیشیا کی ایک شمالی ریاست بھی ایک ایسے منصوبے پر غور کررہی ہے کہ وہ صرف خواتین ،خاص طور مشرق وسطٰی سے تعلق رکھنے والی سیاح خواتین کے لئے چھ تفریحی مقامات پر آبشاریں بنائی جائیں، جہاں یہ خواتین اطمینان سے لطف اندوز ہو سکیں۔ اسی طرح ملائیشیا کی ہی ایک اور شمالی ریاست نے یہ قانون پاس کیا ہے کہ مردوں اور خواتین کے لئے دکانوں میں الگ الگ قطاریں بنائی جائیں ۔

واضح رہے کہ ملائیشیا کی کُل 28 ملین آبادی میں سے 60 فیصد مسلمانوں پر مشتمل ہے جبکہ اقلیتوں میں نسلی طور پر چینی اور بھارتی نژاد افراد شامل ہیں۔

رپورٹ: عنبرین فاطمہ

ادارت : افسر اعوان

DW.COM