1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

ملائشیا حکومت کی ویب سائٹس ’ہیک‘ کر لی گئیں

حکومتی ذرائع کے مطابق ملائشیا کی حکومت کی اکاون ویب سائٹس کو راتوں رات کمپیوٹر ہیکرز نے ’ہیک‘ کرلیا، تاہم کوئی ذاتی یا اقتصادی ڈیٹا چوری نہیں ہوا ہے۔

default

ملائشیا کے حکومتی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ حکومت کی اکاون ویب سائٹس کو ہیک کیا گیا ہے۔ جنوب مشرقی ایشیا کے اس ملک کے حکومتی عہدیداروں کے مطابق ہیکرز نے اکانوے ویب سائٹس کو ہیک کیا، جن میں اکاون حکومت کی تھیں۔ ہیک ہونے والی حکومتی ویب سائٹس میں ملائشیا کی صنعتی ریگولیٹری باڈی، ملائشیئن کمیونیکیشنز اور ملٹی میڈیا کمیشن کی ویب سائٹس شامل ہیں۔

ملائشیا آن لائن ہیکرز کی کارروائی کا نشانہ بننے والا تازہ ترین ملک ہے۔ خیال رہے کہ ملائشیا میں انٹرنیٹ کا استعمال وسیع پیمانے پر کیا جاتا ہے۔ حکومت اس سے قبل انٹرنیٹ ہیکرز پر غداری کے الزامات تک لگاتی رہی ہے، اور بعض کو تو شبے کی بنیاد پر جیل میں بھی ڈالا گیا ہے۔

Google China

انٹرنیٹ ہیکرز سرچ انجن گوگل کو بھی نشانہ بنا چکے ہیں

سرکاری ذرائع کے مطابق بدھ کی شب ہیک ہونے والی چھہتر ویب سائٹس تک رسائی کو ممکن بنا دیا گیا تھا۔ اس ’سائبرحملے‘ کے بعد ہیکرز کے ایک نامعلوم گروپ کی جانب سے ایک انتباہی بیان سامنے آیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ وہ حکومت کی جانب سے وکی لیکس کو سنسر کرنے کے اقدام کے خلاف حکومتی عہدیداروں کے پورٹلز کو نشانہ بنائے گا۔ خیال رہے کہ عالمی شہرت یافتہ وکی لیکس ویب سائٹ سرکاری اور کارپوریٹ راز افشاء کرنے کا کام کرتی ہے۔

حکومت کے مطابق زیادہ تر سرکاری ویب سائٹس اور اس پہ موجود مواد محفوظ ہے۔

انٹرنیٹ ہیکرز اس سے قبل بھی اس نوعیت کی کارروائیاں کرتے رہے ہیں جہاں سرکاری اداروں کی ویب سائٹس کو نشانہ بنایا جاتا ہے۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: عابد حسین

DW.COM