1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مقتول گورنر کے حامیوں کو بھی خطرہ: پاکستانی علماء

اعتدال پسندانہ موقف کے حامل پانچ سو پاکستانی علماء نے خبردار کیا ہے کہ گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قتل پر دکھ کا اظہار کرنے والوں کے ساتھ بھی اِسی طرح کا واقعہ پیش آ سکتا ہے۔

default

ایک مظاہرے کا منظر، فائل فوٹو

تحفظِ ناموسِ رسالت قانون کے حق میں بڑے پیمانے پر مظاہرے کرنے والی جماعت اہلسنت پاکستان کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’اِس جماعت کے 500 سے زیادہ علماء نے مسلمانوں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ مقتول گورنر پنجاب سلمان تاثیر کی نمازِ جنازہ نہ پڑھیں اور نہ ہی پڑھائیں‘۔ بیان کے مطابق ’گورنر کی موت پر رنج و غم یا ہمدردی کا اظہار بھی نہیں کیا جانا چاہئے کیونکہ جو کوئی بھی پیغمرِ اسلام کی توہین کی حمایت کرے گا، وہ خود بھی توہینِ رسالت کا مرتکب ہو گا‘۔

دوسری جانب جماعت اہلسنت پاکستان اُن طالبان عسکریت پسندوں کو بھی کھلی تنقید کا نشانہ بناتی ہے، جو اسلام آباد حکومت کے ساتھ ساتھ اُس کی حامی واشنگٹن حکومت کے بھی سخت مخالف ہیں۔ اِس گروپ کا تازہ بیان یہ بھی ظاہر کرتا ہے کہ امریکہ کے لئے پاکستانی قیادت کو مذہبی انتہا پسندی کے خلاف سخت اقدامات کا قائل کرنا کس قدر مشکل کام ہے۔

سلمان تاثیر پاکستانی صدر آصف علی زرداری کے قریبی ساتھیوں میں سے ایک تھے اور اسلام آباد میں منگل کو دن دہاڑے اُن کے قتل سے یہ بات ثابت ہو گئی ہے کہ حکومت ملک میں حالات کو مستحکم بنانے میں ناکام ہو گئی ہے۔

NO FLASH Pakistan Gouverneur Salman Taseer ermordet

اپنےکئی ہم عصروں کے برعکس سلمان تاثیر تحفظ ناموسِ رسالت کے قانون سے متعلق اپنے تحفظات کا زیادہ برملا اظہار کرتے تھے

اُنہیں اُن کے محافظوں میں شامل ایک گارڈ ملک ممتاز حسین قادری نے غالباً اِس بناء پر فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا تھا کہ سلمان تاثیر نے توہینِ رسالت کے الزام میں سزائے موت پانے والی اور چار بچوں کی ماں ایک مسیحی خاتون آسیہ بی بی کے ساتھ اظہارِ ہمدردی کرتے ہوئے تحفظ ناموسِ رسالت کے قانون کو ’کالا قانون‘ قرار دیا تھا۔

حقوق انسانی کے لئے سرگرم گروپوں کا موقف ہے کہ قدامت پسند مذہبی حلقے اور عام شہری اپنے ذاتی جھگڑے نمٹانے کے لئے اکثر اِس قانون کا ناجائز استعمال کرتے ہیں۔ چونکہ عوام کی اکثریت تحفظِ ناموسِ رسالت کے قانون کی حامی ہے، اِس لئے زیادہ تر سیاسی رہنما بھی کھلے عام ا ِس قانون کے خلاف کچھ کہنے سے گریز کرتے ہیں تاہم سلمان تاثیر اِس قانون کو کھلے عام ہدفِ تنقید بناتے تھے۔

وزیر داخلہ رحمان ملک کے مطابق سلمان تاثیر کے گارڈ ملک ممتاز حسین قادری نے اپنے جرم کا اعتراف کر لیا ہے اور اُسے گرفتار کر لیا گیا ہے۔ دنیا ٹیلی وژن سے نشر ہونے والے ایک بیان میں ملزم قادری نے کہا کہ ’سلمان تاثیر توہینِ رسالت کا مرتکب ہوا اور یہ توہینِ رسالت کی سزا ہے‘۔

جماعت اہلسنت پاکستان کے ’علماء‘ کے مطابق گورنر پنجاب کے قاتل نے ’ہمت‘ اور مذہبی جوش و جذبے کا مظاہرہ کیا ہے اور اُس کا اقدام پوری دُنیا کے مسلمانوں کے لئے فخر کا باعث بنا ہے۔ اِس جماعت کے بیان کے مطابق وہ ’نام نہاد‘ دانشور، وزراء، سیاستدان اور ٹیلی وژن اینکرز، جو تحفظِ ناموسِ رسالت کے قانون کی مخالفت کرتے ہیں اور توہینِ رسلت کے مرتکب افراد کی حمایت کرتے ہیں، انہیں سلمان تاثیر کی موت سے سبق سیکھنا چاہئے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس