1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مصطفیٰ کمال کی ڈرامائی پریس کانفرنس، کس نے کیا کہا

ایم کیو ایم کے سابق رہنما اور کراچی کے سابق ناظم مصطفیٰ کمال کی پریس کانفرنس کے بعد سوشل میڈیا پر کئی افراد نے اس موضوع پر دلچسپ تبصرے کرتے ہوئے اپنی رائے دی ہے۔

پاکستان کے مشہور اینکر سید طلعت حسین نے اس حوالے سے لکھا، ’’مصطفیٰ کمال کو جنرل مشرف کی سرپرستی سے ’را‘ کی حمایتی جماعت کے سیٹ اپ اور کراچی میں اپنی میئر شپ کے دوران 12 مئی کی خون ریزی کا بھی ذکر کرنا چاہیے۔‘‘

کچھ افراد نے اس حوالے سے دلچسپ تصاویر بھی شئیر کیں۔

ماضی میں جیو نیوز پر اپنا منفرد پروگرام کرتے ہوئے شہرت پانے والی ثنا بُچہ نے الطاف حسین کے خلاف انکشافات کی ٹائمنگ پر بات کی، ’’سچ وقت پر بولنا سچ اور سچ اپنے وقت پر بولنا مفاد ہے۔‘‘

خاتون اینکر پرسن نسیم زہرہ نے فیس بک پر اس حوالے سے لکھا، ’’کراچی کے ناظم کی حیثیت سے مصطفیٰ کمال نے شاندار منصوبوں پر کام کیا لیکن اس پریس کانفرنس میں انہوں نے تسلیم کیا ہے کہ وہ الطاف حسین کے غیر معقول احکامات بھی مانتے رہے ہیں۔‘‘

مصنفہ بینا شاہ نے مصطفیٰ کمال کی نئی پارٹی کے حوالے سے ٹوئٹ کی کہ ’’نامعلوم افراد پارٹی۔‘‘

سوشل میڈیا کے سرگرم صارف عمر قریشی نے ٹوئٹ کی،’’اس پریس کانفرنس کے بعد اگر ایم کو ایم کے کچھ رہنماؤں نے پارٹی چھوڑ بھی دی تو اس بات کی کوئی گارنٹی نہیں کہ ایم کو ایم کے ووٹ بینک میں الطاف حسین کے ہوتے ہوئے کوئی کمی آئے گی۔‘‘

ریڈیو پاکستان کے سابق سربراہ مرتضی سولنگی نے لکھا، ’’جو الزامات آج مصطفیٰ کمال نے لگائے وہ تو پی ٹی آئی سمیت کئی پارٹیاں ایک عرصے سے لگاتی رہی ہیں، پھر لوگ ان پارٹیوں میں کیوں نہ جائیں؟ ‘‘

DW.COM