1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مصر کی سیاسی تاریخ کا ایک نازک لمحہ

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کی ہائی کمشنر نیوی پلے نے منگل کو قاہرہ میں ملین مارچ کے انعقاد کے موقع پر حکومت اور مظاہرین سے امن عامہ برقرار رکھنے اور پُر سکون رہنے کی اپیل کی ہے۔

default

قاہرہ کی سڑکوں پر ٹینک دوڑ رہے ہیں

نیوی پلے نے ایک بیان میں کہا کہ انہیں مصر کے حالیہ بحران کے دوران 300 افراد کے مارے جانے کی غیر مصدقہ خبریں ملی ہیں۔ نیوی پلے نے مصری حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس نازک وقت میں عوام کی جان و مال کی حفاظت کو یقینی بنائیں۔ نیوی پلے نے پولیس اور فوج کو مظاہرین کے خلاف طاقت کے استعمال سے باز رہنے کو کہا ہے۔ نیوی پلے کے بقول’گزشتہ آٹھ روز سے جاری احتجاج اور مظاہروں کے دوران 300 افراد کی جانیں ضائع ہوئیں، تین ہزار سے زائد مظاہرین کے زخمی ہونے اور سینکڑوں کی گرفتاریوں کی اطلاعات مل رہی ہیں‘۔ جبکہ نیوی پلے کی ایک ترجمان نے کہا ہے کہ یہ اعداد و شمار غیر سرکاری اداروں نے دیے ہیں۔

EU Aussenpolitik Catherine Ashton

یورپی یونین کی خارجہ امور کی نگراں کیتھرین ایشٹن

دریں اثناء یورپی یونین کی خارجہ امور کے شعبے کی نگران کیتھرین ایشٹن نے اپنے بیان میں کہا ’ میرے خیال میں یہ امرنہایت ضروری ہے کہ یورپی یونین اس وقت اور مستقبل میں بھی مصر کی مکمل حمایت کے لئے تیار رہے‘۔

ادھر جرمن وزیر خارجہ گیڈو ویسٹر ویلے نے کہا ہے کہ جرمنی اس سلسلے میں کسی ایک فریق کا ساتھی نہیں بننا چاہتا بلکہ جمہوری طریقہ کار کا ساتھ دے گا۔ ویسٹر ویلے کے بقول ’جو لوگ اس وقت اپنی آزادی کی خاطر سڑکوں پر نکل آئے ہیں، ان کے پاس یہ ایک نادر موقع ہے اپنے مطالبات منوانے کا‘۔

تاہم ویسٹر ویلے نے کہا ہے کہ جرمنی کبھی بھی یہ نہیں چاہے گا کہ مصر کے موجودہ بحران کا فائدہ مسلم انتہا پسند اُٹھائیں۔

مشرق وسطیٰ میں اسرائیل کے سبب سے بڑے حلیف ملک مصر کا سیاسی بحران تل ابیب حکومت کے لئے لمحہء فکریہ بنتا جا رہا ہے۔ اُدھر ترک وزیر اعظم نے کہا ہے کہ حُسنی مبارک کو اپنے عوام کی بات مان لینی چاہئے۔

مصری شہر اسکندریہ میں بھی آج ایک بڑی ریلی کا انعقاد ہو رہا ہے۔ اُدھر تمام اپوزیشن جماعتیں نو منتخب حکومت کے ساتھ اصلاحات سے متعلق مذاکرات کی پیشکش قبول کرنے کے بارے میں صلاح ومشورہ کر رہی ہیں۔ جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق تین اپوزیشن پارٹیوں نے کہا ہے کہ نائب صدر عُمر سلیمان کے ساتھ بات چیت کے امکانات پر غور کیا جا رہا ہے۔ عُمر سلیمان نے تمام سیاسی جماعتوں کے ساتھ مکالمت شروع کرنے کا عندیہ گزشتہ شب ایک بیان میں دیا تھا۔

FDP Dreikönigstreffen Westerwelle

جرمن وزیر خارجہ گیڈو ویسٹر ویلے نے مصر میں جمہوریت کا ساتھ دینے کا یقین دلایا ہے

تاہم یہ امر ابھی واضح نہیں ہے کہ آیا حکومت مرکزی اپوزیشن پارٹی ’اخوان المسلمون‘ کو بھی مذاکرات میں شامل کرنا چاہتی ہے یا نہیں۔

اُدھر اپوزیشن کے مابین اس بارے میں اختلافات کی نشاندہی ہو رہی ہے کہ حکومت کے ساتھ بات چیت کے لئے کس جماعت کو مقرر کیا جائے گا۔ رواں ہفتے کے اوائل میں ’اخوان المسلمون‘ سمیت چند سیاسی گروپوں نے نوبل امن انعام یافتہ محمد البرادعی کو فوج اور دیگر جماعتوں کے ساتھ بات چیت کے لئے مقرر کیا تھا۔ تاہم البرادعی کی شخصیت مصر میں کافی حد تک متنازعہ سمجھی جاتی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ البرادعی نے طویل عرصہ ملک سے باہر گزارا ہے اور اس دوران وہ جوہری توانائی کے عالمی ادارے IAEA کے سربراہ بھی رہ چُکے ہیں۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس