1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مصر: مبارک کا ہتھیار ’ایمرجنسی کورٹ‘ پھر سے بحال

گزشتہ ہفتے مصری دارالحکومت قاہرہ میں اسرائیلی سفارت خانے پر ہونے والے حملے کے نتیجے میں مصری عوام اُن سیاسی کامیابیوں سے ایک بار پھر محروم ہو سکتے ہیں، جو اُنہوں نے اِس سال کی زبردست جدوجہد کے بعد حاصل کی ہیں۔

default

اِس عوامی جدوجہد اور قربانیوں کے نتیجے میں حسنی مبارک تو صدر کے عہدے سے رخصت ہو چکے ہیں تاہم ایسا لگتا ہے کہ اُن کی جگہ لینے والے فوجی حکمران ملک بھر میں حفاظتی انتظامات کو زیادہ سخت بنانے کے عمل کے دوران مبارک دور کے سیاہ قوانین کو پھر سے بحال کر سکتے ہیں۔

حفاظتی انتظامات زیادہ سخت بنانے کی ضرورت گزشتہ ہفتے کے اُس واقعے کے بعد پیش آ رہی ہے، جس میں مظاہرین نے اُس عمارت پر دھاوا بول دیا تھا، جس کی بالائی دو منزلیں اسرائیلی سفارت خانے کے پاس تھیں۔ مظاہرین نے اسرائیلی پرچم اُتار کر وہاں مصری پرچم لہرا دیا تھا اور نچلی منزل کے اسٹور روم سے دستاویزات نکال کر ایک کھڑکی سے باہر مشتعل مظاہرین کی جانب اچھال دی تھیں۔

مظاہرین نے اسرائیلی پرچم اُتار کر وہاں مصری پرچم لہرا دیا تھا

مظاہرین نے اسرائیلی پرچم اُتار کر وہاں مصری پرچم لہرا دیا تھا

تب اسرائیلی سفیر اور اُن کے اہل خانہ اُسی رات ایک اسرائیلی فوجی ہیلی کاپٹر میں بیٹھ کر قاہرہ سے واپس چلے گئے۔ اسرائیل کے ساتھ ساتھ امریکہ نے بھی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مصر پر زور دیا کہ وہ اسرائیل کے ساتھ 1975ء میں طے پانے والے متنازعہ معاہدے کی پاسداری کرتے ہوئے سفارت خانے کو تحفظ فراہم کرے۔

قاہرہ حکومت نے فوری طور پر یقین دلایا کہ وہ سفارت خانے کی حفاظت کے لیے انتظامات زیادہ سخت بنا دے گی اور سفارت خانے پر حملے کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لائے گی۔ اِس طرح مصری قیادت نے گویا یہ عندیہ دیا کہ مصر اور اسرائیل کے باہمی امن معاہدہ بدستور قائم اور محفوظ ہے۔

بہت سے مصری شہریوں کے خیال میں زیادہ سخت حفاظتی انتظامات کا مطلب اُن سیاسی آزادیوں سے محرومی ہے، جو عوامی بغاوت کے بعد سے اب تک مصری عوام کو حاصل ہوئی ہیں۔ درحقیقت حکام نے کہا ہے کہ وہ اُس ایمرجنسی قانون کو پھر سے بحال کر رہے ہیں، جو مبارک نے 1981ء میں برسرِاقتدار آنے کے فوراً بعد معاشرے کو کنٹرول کرنے کے لیے متعارف کروایا تھا۔ سفارت خانے پر حملہ کرنے والوں پر اِسی قانون کے تحت مقدمہ چلایا جائے گا۔

قاہرہ میں تازہ ہنگاموں کے بعد اسرائیلی سفارت خانے کے باہر حفاظتی اقدامات سخت بنا دیے گئے ہیں

قاہرہ میں تازہ ہنگاموں کے بعد اسرائیلی سفارت خانے کے باہر حفاظتی اقدامات سخت بنا دیے گئے ہیں

پولیٹیکل اور اسٹریٹیجک اسٹڈیز کے الاہرام انسٹی ٹیوٹ سے وابستہ عماد غاد کے مطابق یہ پہلا موقع ہے کہ کسی ملزم کو اسٹیٹ سکیورٹی کورٹ میں منتقل کیا گیا ہے۔ اُنہوں نے کہا:’’ملک میں سلامتی کی صورتحال پہلے ہی خراب ہو چکی ہے اور جرائم بڑھ رہے ہیں۔ وہ (حکمران جرنیل) اِس صورتحال کا فائدہ اٹھا رہے ہیں۔‘‘

اپوزیشن سیاسی جماعتوں اور کارکنوں نے اسرائیلی سفارت خانے پر حملے کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ اس طرح کی کارروائیاں عوامی بغاوت کے مقاصد پر منفی اثرات مرتب کرتی ہیں۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: حماد کیانی

DW.COM

ویب لنکس