1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مصری جہاز کے پائلٹ کا رویہ ہدایات کے مطابق تھا، یونانی حکام

فرانس کی جانب سے بھی ایجِپٹ ایئر کے مسافر طیارے کی تباہی کی تصدیق کر دی گئی ہے۔ اسی دوران یونانی حکام نے پیرس سے قاہرہ جانے والے اس بد قسمت طیارے کے بارے میں مزید تفصیلات جاری کی ہیں۔

یونانی حکام نے بتایا ہے کہ جب ایجِپٹ ایئر کے پائلٹ سے آخری مرتبہ ان کا رابطہ ہوا، تو یہ جہاز 37 ہزار فٹ کی بلندی پر تھا۔ اس دوران پائلٹ نے کسی قسم کی تکنیکی خرابی یا کسی اور مسئلے کی جانب کوئی اشارہ نہیں کیا تھا۔ اس بیان میں کہا گیا ہے کہ اس رابطے کے پچیس منٹ بعد اس جہاز کا رابطہ راڈار سے منقطع ہو گیا تھا، ’’ہم نے اس طیارے کے یونانی فضائی حدود میں داخلے اور رخصتی تک کی تمام معلومات اکٹھی کی ہیں، جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس جہاز نے ہماری جانب سے دی جانے والی تمام تر ہدایات پر عمل کیا تھا۔ کسی جگہ بھی کوئی خلاف ورزی نہیں ہوئی تھی۔‘‘

فرانسیسی صدر فرانسوا اولانڈ کے بقول یہ واضح ہو گیا ہے کہ ایجِپٹ ایئر کا یہ مسافر بردار طیارہ بحیرہ روم میں گر کر تباہ ہو گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس تباہی کی وجہ ابھی تک معلوم نہیں ہو سکی۔

اس موقع پر انہوں نے اس حادثے میں مرنے والوں کے لواحقین سے اظہار تعزیت بھی کیا۔ اس ایئر بس 320 میں56 مسافر، عملے کے سات افراد اور تین محافظین سوار تھے۔ یہ پرواز پیرس سے قاہرہ جا رہی تھی۔ ہلاک ہونے والے زیادہ تک مصری شہری بتائے گئے ہیں جبکہ پندرہ فرانسیسی باشندے بھی اس حادثے کا شکار ہوئے ہیں۔

اس واقعے کے بعد مصر اور فرانس کے حکام نے ایک دوسرے سے ٹیلیفون پر بات کرتے ہوئے اس سانحے پر تبادلہ خیال کیا۔ اس موقع پر فرانس نے طیارے کی تلاش میں مصر کو ہر طرح کے تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔ اسی دوران دونوں ممالک میں ہنگامی اجلاس بھی طلب کر لیے گئے ہیں اور مختلف زاویوں سے اس حادثے پر غور کیا جا رہا ہے۔ فرانسیسی وزیر اعظم مانوئل والس پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ اس طیارے کو پیش آنے والے حالات کی وجوہات سے متعلق کسی بھی امکان کو رد نہیں کیا جا سکتا۔